کم عمری اور جبری شادیوں کی روک تھام کےلئے حکومت پنجاب نے نوٹیفکیشن جاری کردیا

کم عمری اور جبری شادیوں کی روک تھام کےلئے حکومت پنجاب نے نوٹیفکیشن جاری کردیا
کم عمری اور جبری شادیوں کی روک تھام کےلئے حکومت پنجاب نے نوٹیفکیشن جاری کردیا

  


لاہور( مانیٹرنگ ڈیسک ) حکومت پنجاب کی طرف سے صوبہ بھر میں نکاح کےلئے لڑکی کی کم از کم عمر 16سال مقرر کر دی گئی ہے اور خلاف ورزی کرنیوالوں کو قید اور جرمانہ کی سزاؤں کا سامنا ہوگا، اس ضمن میں  نوٹیفکیشن بھی جاری کر دیا گیا ہے ۔

تفصیلات کے مطابق پنجاب حکومت نے نوٹیفیکیشن جاری کیا ہے جس کے مطابق کم عمری اور جبری شادیوں کی روک تھام کےلئے صوبہ بھر میں لڑکی کی کم ازکم عمر 16سال مقرر کر دی گئی ہے۔نئے قانون کے مطابق نکاح خوان لڑکی کو تمام شرائط پڑھ کر سنانے کا پابند ہو گا اور خلاف ورزی کرنیوالوں کو 6ماہ قید اور 50ہز ار روپے جرمانہ کی سزا ہو گی جبکہ جبری شادی کروانے والوں کے خلاف 3-7سال قید اور 5لاکھ روپے جرمانہ کی سزا متعین کر دی گئی ہے۔

ترجمان کا کہنا ہے کہ پنجاب کی تمام یو سیز کے سیکریٹریز کو اس قانون سے متعلق پمفلٹس اور نوٹیفیکیشن کی کاپیاں ارسال کر دی گئی ہیں۔

مزید : لاہور


loading...