پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی؟

پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی؟

خبر ہے کہ عالمی مارکیٹ میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کے نتیجے میں یکم ستمبر سے پاکستان میں بھی پٹرولیم نرخ کم کئے جا رہے ہیں، یہ کمی7 روپے سے 7روپے 50 پیسے فی لیٹر تک متوقع ہے۔ حکومت نے اس کی منظوری دینا ہے،ابھی تک یہ خبر ہے اور یہ بھی ممکن ہے کہ جیسے پچھلے ماہ پانچ روپے سے زیادہ فی لیٹر کمی کی سفارش کی گئی تھی اور کمی ایک روپیہ چند پیسے ہوئی ، ویسے ہی اب بھی شہری مُنہ دیکھتے رہ جائیں۔عالمی مارکیٹ میں پٹرولیم مصنوعات38.7 ڈالر فی بیرل تک آ گئی ہیں اور یہ گزشتہ ڈھائی مہینے میں94ڈالر فی بیرل سے یہاں تک پہنچی ہیں، جبکہ اس سے پہلے یہ نرخ 114ڈالر فی بیرل تک چلے گئے تھے۔حکومت نے کسی بھی مرحلے پر عالمی مارکیٹ کے تناسب سے مقامی مارکیٹ کو سستا نہیں کیا، البتہ جب کبھی اضافہ ہو توکر دیا جاتا ہے۔ حکومت نے پٹرولیم کے نرخوں سے اپنی کمائی کا سلسلہ شروع کر دیا اور محصولات زر میں کمی کی تلافی پٹرولیم مصنوعات کی قیمت قائم رکھ کر کی گئی۔اب تو عالمی مارکیٹ میں پٹرولیم مصنوعات کی کمی زیادہ پریشانی دے گی، اس لئے گاڑیوں کی ٹینکیاں فل کرائی گئی ہیں، تاہم شہری اور عوام توقع کرتے ہیں کہ حکومت عالمی مارکیٹ کے اثرات عام شہری تک آنے دے گی اور پٹرولیم مصنوعات میں کم از کم12سے15روپے فی لیٹر تک کمی کرے گی، لیکن اطلاعات کے مطابق ایسا نہیں کیا جا رہا۔ حکومت عالمی مارکیٹ میں شدید مندے کو بھی اپنے مقصد کے لئے استعمال کرنے کا فیصلہ کر چکی اور جتنی بھی بچت ممکن ہو گی کرے گی۔اصولاً حکومت کو سستا ایندھن لے کر تھرمل بجلی گھر چلانا چاہئیں کہ لوڈشیڈنگ کا دورانیہ کم ہو۔

مزید : اداریہ


loading...