ڈہرکی، عدالتی پابندی کے باوجود سیاستدانوں، پولیس افسر کی سرپنچی میں غیر قانونی جرگہ

ڈہرکی، عدالتی پابندی کے باوجود سیاستدانوں، پولیس افسر کی سرپنچی میں غیر ...

  

ڈہرکی(نامہ نگار ) سندھ کے نامور بااثر سرداروں پیروں اور میروں اور وڈیروں نے مل کر نے سپریم کورٹ کے حکم کی عدولی کرڈالی سپریم کورٹ کی طرف سے سندھ میں سرداری جرگوں پر پابندی عائد کرنے کے حکم کے باوجود ضلع گھوٹکی خانپور مہر کے علاقہ میں ایس ایس پی گھوٹکی مسعود بنگش نے اپنی(بقیہ نمبر40صفحہ12پر )

سرپرستی میں غیر قانونی طور پربہت بڑا جرگہ منعقد کرایا تفصیلات کے مطابق ضلع گھوٹکی اوباڑوکچے کے علاقہ میں مختلف برادریوں کے جھگڑوں میں مردو خواتین سمیت تقریبا 27قتل ہونے والے انسانی جانوں کے سروں کی قیمت صرف 3کروڑ10لاکھ روپے مقرر کی گئی برادریوں کو جرگہ ماننے گا دباؤ جبکہ عدالتوں میں اقتل ہونے والوں کے مقدمات زیر سماعت ہیں اسکے باوجود علاقہ کے ایم این اے اور مہر گروپ کے سربراہ سردار علی گوہر خان مہر اور شکار پورضلع سے تعلق رکھنے والے سردار میر منظور پہنورکی سرپنچی اور ضلع گھوٹکی کے ایس ایس پی مسعود خان بنگش نے پولیس کی بھاری نفری مقررکرکے اپنی سرپرستی میں مہر،شر،سیلرو اور دھاندوقابائل میں چلنے والے عرصہ دراز سے خونی تنازعہ کا جرگہ منعقد کرایا گیا ایسے غیر قانونی جرگہ میں خونی تنازعہ میں ملوث اور علاقہ کے دیگر برادریوں کے معززین جن میں سردارمیر ابراہیم جتوئی، سردار میرعابد جتوئی،سردارامیر بخش خان بھٹو، پی پی پی کے سابق ایم این ایعبدالحق عرف میاں مٹھو، سردار رحیم بخش بوذدار،علی بخش بڈانی،سردار احمد خان سیلو،عمرشر،فتح محمدشراوردیگر نے بڑی تعدادمیں شرکت کی فرقین کی باتیں سننے کے بعدشر برادری پر مہر برادری داھاندو برادری اور سیلروں برادری پر27ایک دوسروں پر قتل ثابت ہوئے جس پر سرپنچوں نے ایک انسانی جان کے قتل کی قیمت 10لاکھ روپے مقرر کی گئی جبکہ عورتوں اورعلاقہ کے وڈیروں کے قتل ہونے کی سروں کی قیمت20لاکھ روپے مقرر کی گئی اس طرح مجوعی طورقتل میں ملوث برادریوں پر27قیمتی جانیں قتل ہونے والوں کی سروں کی قیمت 3کروڑ10لاکھ روپے جرمانہ کی صورت میں مقرر کی گئی ہے جبکہ جرگہ میں یہ بات واضح نہیں کی گئی کہ جرمانہ کی رقم قتل ہونے والوں کے ورثا کوملے گی یا انکی برادری کے سرداروں کودی جائیگی سرپنچوں نے قتل ہونے والے ورثا کو شاہی حکم نامہ صادرکرتے ہوئے کہا ہے کہ عدالت میں قتل کے ایک دوسروں پر زیر سماعت مقدمات بھی اپنے اپنے بیانات تبدیل کرکے عدالتوں سے سب قتل کیس ختم کرائے جائیں جرگہ نہ ماننے والوں پر بھاری جرمانہ عائد کرنے اور برادری سے نکالنے کا بھی اعلان کیا گیا ہے ۔

غیر قانونی جرگہ

مزید :

ملتان صفحہ آخر -