داعش کے جنگجوؤں کا لبنان اور شام کے سرحدی علاقے سے انخلاء شروع ہو گیا

داعش کے جنگجوؤں کا لبنان اور شام کے سرحدی علاقے سے انخلاء شروع ہو گیا

دمشق(آن لائن)لبنان اور شام کے درمیان واقع سرحدی علاقے سے داعش کے جنگجوؤں اور ان کے خاندانوں کا انخلا شروع ہوگیا ہے،داعش جنگجوؤں کا پہلا قافلہ شام کے مشرق میں داعش کے زیر قبضہ علاقے کی جانب روانہ ہوگیا ہے۔شام کے سرکاری ٹیلی ویڑن نے داعش کے قافلے کی شکل میں انخلا کی ویڈیو فوٹیج نشر کی ہے۔داعش نے لبنانی فوج کے ساتھ ایک ہفتے تک لڑائی کے بعد اتوار کو جنگ بندی سے اتفاق کیا تھا اور اس کے تحت سرحدی علاقہ خالی کرنے سے اتفاق کیا تھا۔سرحد کے دوسری جانب ان کا حزب اللہ کے ساتھ بھی جنگ بندی کا ایک ایسا ہی سمجھوتا طے پا گیا تھا اور شامی فوج نے اس کی منظوری دے دی تھی۔شامی فوج اور حزب اللہ نے داعش کے جنگجوؤں اور ان کے خاندانوں کے انخلا کے لیے ٹرانسپورٹ کا بندوبست کیا ہے۔ان کے یہاں سے مشرقی شام کی جانب اٹھ جانے کے بعد دونوں کے سرحدی علاقے سے جنگجوؤں کا وجود بالکل ختم ہوجائے گا۔یہ پہلا موقع ہے کہ داعش نے لڑائی کے بعد مجبور ہوکر اپنے زیر قبضہ کوئی علاقہ اس طرح خالی کرنے سے اتفاق کیا ہے۔لبنانی فوج گذشتہ ایک ہفتے سے داعش کے خلاف اپنے سرحدی علاقے میں کارروائی کررہی تھی اور اس کا کہنا ہے کہ اس کو شیعہ ملیشیا حزب اللہ یا شامی فوج کی کوئی مدد حاصل نہیں تھی اور اس نے جنگجوؤں کے خلاف اکیلے ہی آپریشن کیا ہے جبکہ سرحد پار علاقے میں حزب اللہ اور شامی فوج نے الگ سے داعش کا گھیراؤ کررکھا تھا۔لبنان کے ایک سکیورٹی ذریعے نے بتایا ہے کہ جنگ بندی کے سمجھوتے کے تحت داعش کے جنگجو اور ان کے خاندان شام کے سرحدی علاقے میں ایک جگہ پر جمع ہوں گے اور پھر انھیں شام کے مشرقی قصبے البوکمال میں بسوں کے ذریعے منتقل کردیا جائے گا۔

شام کے سرکاری ٹیلی ویڑن الاخباریہ نے اطلاع دی ہے کہ داعش کے جنگجو سرحدی علاقے میں اپنے ہیڈ کوارٹرز اور مشینری کو جلا رہے تھے۔ایک عینی شاہد نے بھی بتایا ہے کہ پہاڑی علاقے سے سیاہ دھواں اٹھتے ہوئے نظر آرہا تھا اور وہاں شامی فوج اور حزب اللہ کی گاڑیاں بھی موجود تھیں۔لبنانی فوج کے ساتھ سمجھوتے کے تحت داعش نے ان نو فوجیوں کے بارے میں بھی بتانا تھا جنھیں انھوں نے سنہ 2014ء4 میں لبنان کے سرحدی شہر عرسال پر چڑھائی کے وقت یرغمال بنا لیا تھا۔لبنان کے ایک سینیر سکیورٹی عہدہ دار نے اتوار کی شب بتایا تھا کہ یہ فوجی یقینی طور پر مارے جاچکے ہیں۔ان میں سے چھے کی لاشیں مل گئی ہیں اور دو کی تلاش کے لیے داعش کے زیر قبضہ علاقے میں کھدائی کی جارہی تھی۔

مزید : عالمی منظر

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...