مردم شماری کے اعداد و شمار سے نفرتیں پیدا ہوں گی : انیس احمد ایڈ ووکیٹ

مردم شماری کے اعداد و شمار سے نفرتیں پیدا ہوں گی : انیس احمد ایڈ ووکیٹ

کراچی(اسٹاف رپورٹر)پاکستان پیپلزپارٹی ، متحدہ قومی موومنٹ کے بعدپاک سرزمین پارٹی نے بھی مردم شماری کے نتائج کو تسلیم نہ کرتے ہوئے احتجاج کا اعلان کیا ہے۔منگل کو پاک سرزمین پارٹی کے سینئرنائب صدرانیس احمد ایڈووکیٹ نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ ملک بھرمیں لوگ دیہی علاقوں سے شہری علاقوں کی طرف آرہے ہیں، بلوچستان اور اندرون سندھ سمیت ملک بھر سے لوگ کراچی آکر آباد ہورہے ہیں، ایک اندازے کے مطابق کراچی میں ملک کے مختلف علاقوں سے ہر سال 10 سے 15 لاکھ لوگ آتے ہیں، 18 سال پہلے کراچی کو 98 لاکھ افراد کا شہر کہا گیا اور اب تو دنیا بھی کہہ رہی ہے کہ کراچی کی آبادی ڈھائی کروڑ سے زیادہ ہے۔ ہمیں کہیں بھی آبادی بڑھنے سے کوئی اعتراض نہیں لیکن ہمیں کراچی کی آبادی کو کم دکھانا ناانصافی ہے۔انہوں نے کہاکہ ہم مردم شماری کے اعداد و شمار کو مسترد کرتے ہیں، سندھ سے ناانصافی ہوئی تو پاک سرزمین احتجاج کا حق رکھتی ہے، عیدالضحی کے بعد مردم شماری پر تحفظات کے اظہارکے لیے عوام میں جائیں گے، لوگوں میں آگاہی کے لیے ہر پلیٹ فارم استعمال کریں گے، اس سلسلے میں مظاہرے بھی کیے جائیں گے۔انیس ایڈووکیٹ نے کہا کہ اسلام آباد میں بیٹھی اشرافیہ صوبوں کو لڑوانا چاہتی ہے، مردم شماری کے اعداد و شمار سے نفرتیں پیدا ہوں گی، ہم پاکستان مخالف کسی سازش کو کامیاب نہیں ہونے دیں گے، کچھ لوگ مردم شماری کی آڑ لے کر فوج کو نشانہ بنانے کی کوشش کررہے ہیں، ہم نہیں چاہتے کہ پاک فوج پر کوئی سوالیہ نشان آئے۔ انہوں نے آرمی چیف سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ مردم شماری کے معاملے کو دیکھیں، مردم شماری کے صحیح نتائج عوام کے سامنے لائے جائیں۔واضح رہے کہ مشترکہ مفادات کونسل کے گزشتہ اجلاس میں مردم شماری کے ابتدائی نتائج پیش کئے گئے تھے جس کے بعد سندھ حکومت اور ایم کیو ایم نے اسے مسترد کردیا تھا۔

مزید : کراچی صفحہ اول