مردان ،ڈاکٹر پر تشدد کیس،ضلع ناظم کیخلاف دہشتگردی دفعات شامل کرنے کا مطالبہ

مردان ،ڈاکٹر پر تشدد کیس،ضلع ناظم کیخلاف دہشتگردی دفعات شامل کرنے کا مطالبہ

مردان ( بیورورپورٹ) ڈاکٹر تشدد کیس ،ڈاکٹروں نے ضلع ناظم کے خلاف درج ایف آئی آر میں انسداد دہشت گردی دفعات شامل کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے ڈاکٹروں کو تحفظ دینے تک او پی ڈیز بند رکھنے کا اعلان کیاہے جبکہ ضلع ناظم نے مقامی عدالت سے قبل ازگرفتاری ضمانت حاصل کرلی منگل کی شام پاکستان ڈاکٹرز ایسوسی ایشن ،ینگ ڈاکٹر زایسوسی ایشن ،پیما اور ملگری ڈاکٹروں کے رہنما ڈاکٹر ذوالفقار درانی ،ڈاکٹر اشفاق ،ڈاکٹر سجاد حسین اور ڈاکٹر رنگ غالب اوردیگردرجنوں ساتھیوں نے ڈاکٹر شکیل کے ہمراہ بتایاکہ ضلع ناظم حمایت اللہ مایار نے تمام اخلاقیات اور قوانین کی حدیں پھلانگ کر ڈاکٹر شکیل کی بے عزتی ہے اور انہیں قتل کی کھلے عام دھمکیاں دیں انہوں نے کہاکہ ضلع ناظم کے الزامات میں کوئی حقیقت نہیں وقوعہ کے وقت مذکورہ وارڈز میں ڈاکٹرز موجود تھے اس کے باوجود ضلع ناظم نے ڈاکٹر شکیل پر تشدد کرکے اسے زدوکوف کیا ڈاکٹروں نے مطالبہ کیاکہ ضلع ناظم کے خلاف محکما نہ ایف آئی آر درج کرکے اس میں انسداد دہشت گردی کا دفعہ شامل کیا جائے اور اسے بلاتاخیرگرفتار کرکے متاثرہ ڈاکٹرکو انصاف فراہم کیاجائے ڈاکٹروں نے اعلان کیا کہ تحفظ کی فراہمی تک ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال کے تمام اوپی ڈیز احتجاجا بند رہیں گے تاہم ایمرجنسی ٹریمنٹ دی جائے گی دریں اثناء ضلع ناظم نے ایڈیشنل سیشن جج ارباب سہیل حامدکی عدالت سے 80ہزار دونفری ضمانت قبل ازگرفتاری حاصل کرلی عدالت نے آئندہ پیشی کے لئے اگلے ماہ کی تیرہ تاریخ مقررکردی ۔

 

مزید : پشاورصفحہ آخر