گردن بھی کٹ جائے لینڈ مافیا اور قرضہ خوروں کے خلاف بولتا رہوں گا: شہباز شریف

گردن بھی کٹ جائے لینڈ مافیا اور قرضہ خوروں کے خلاف بولتا رہوں گا: شہباز شریف
گردن بھی کٹ جائے لینڈ مافیا اور قرضہ خوروں کے خلاف بولتا رہوں گا: شہباز شریف

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن) وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے کہا ہے کہ ملک کے سیاستدانوں نے256ارب روپے کے قرضے معاف کرائے، بیواﺅں ، غریبوں اور یتیم بچیوں کے جمع پونچی بینکوں سے لے کر بیرون ملک جائیدادیں بنائی گئیں اور قرضے معاف کرائے گئے، ملک میں لینڈ مافیا اور قرضہ خوروں کا راج ہے جو غریب عوام کا خون چوس رہے ہیں ، میری گردن بھی کٹ جائے قرضہ خوروں اور لینڈ مافیا کے خلاف بولتا رہوں گا۔

میٹروبس منصوبے میں کرپشن کا الزام ،اگر 48گھنٹوں میں اے آ روائی نیوز ثبوت لے آئے تو عوام میری گردن زنی کردے :شہباز شریف

لاہور میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کا کہنا تھا کہ بینکوں سے لئے گئے256ارب روپے کے قرضے سیاستدانوں نے معاف کرائے اور بیرون ملک جائیدادیں بنائیں مگر پاکستان میں آکر مسٹر کلین بنتے ہیںانہوں نے تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ خان صاحب آپ پانچ سالوں سے کہہ رہے ہیں کہ میٹرو بس پر70ارب روپے خرچ کئے ہیں جبکہ میں آپ کو انتہائی پیار سے کہہ رہا ہوں کہ 30ارب روپے لگے ہیں اگر آپ 35 ارب روپے بھی ثابت کردیں تو میں سزا بھگتنے کے لئے تیار ہوں۔انہوں نے کہا کہ پانامہ کیس میں بڑے بڑے نام آئے ہیں ان کا احتساب کیوں نہیں کیا جارہا ہے۔میں احتساب کا حامی ہوں مگر کرپشن کے اصل مجرموں کو چھوڑ کر مخصوص احتساب کا مخالف ہوں۔ ہمارے عدلیہ میں درجنوں ایسے ججز آئے ہیں جن کا نام تاریخ میںسنہری حروف میں لکھا جائے گا مگر ہماراقانون کے نظام کے سامنے ججز خود مجبور ہیں ، افراد قبر میں پہنچ جاتے ہیں مگر فیصلے نہیں ہوسکتے۔

شہباز شریف کا مزید کہنا تھا کہ بابر اعوان نندی پور پاور پراجیکٹ کی تاخیر اور اربوں روپے کی لوٹ مار کا ذمہ دار ہے ۔عمران خان نے مجھ پر الزامات لگائے میں نے انہیں قانونی نوٹس بھیجا مگر وہ نہ تو خود پیش ہوئے اور نہ ہی ان کا وکیل مقدمے کے سماعت کے لئے تاحال پیش ہوا۔ 10ارب کا الزام لگا کر عمران خان آگے آگے بھاگ رہے ہیں۔عمران خان صاحب کہہ رہے ہیں کہ وہ میرے پول کھول دیں گے تو میں انہیں کہتا ہوں وہ میرے پول کھول دیں۔ میں حاضر ہوں مگر حضور والا الزام ثابت بھی تو کریں ۔ جہانگیر ترین ، جنہیں میں امیر ترین کہوں گا ، انہوں نے مجھ پرانہیں قرض خور کہنے کا الزام عائد کیا اور اس پر میرے خلاف مقدمہ کیا گیا لیکن مقدمے کے سماعت کے دوران ان کا وکیل تاریخیں لئے جار ہا ہے اور عدالت سے درخواست کر رہا ہے کہ جج صاحب شہباز شریف کو روکیں کہ وہ میرے مئوکل کو قرضہ خور نہیں کہے، میں کیسے نہ انہیں قرضہ خور کہوں ؟ انہوں نے غریب اور بیواﺅں کی دولت سے قرضہ لے کر معاف کرائیے،انہوںنے خون چوسا اور میں خاموش رہوں اور میں ڈھنگے کی چوٹ پر کہوں گا۔ وہ لینڈ مافیا کے سرغنہ ہیں اور انہوں نے قرضے معاف کراکے بیرون ملک جائیدادیں بنائی ہیں اور شوگر ملیں لگائی ہیں۔ خان صاحب ہوش کے ناخن لیں ، اللہ سے ڈریں اور بھولے نہ بنیں ،اپنے دائیں بائیں دیکھیں۔میں نے خان صاحب کے خلاف ہتک عزت کا دعویٰ کیا ہے مگر اس کا فیصلہ نہیں ہو رہا ۔ خان صاحب ہتک عزت کے مقدموں کے جلد فیصلوں کے لئے پارلیمنٹ میں آکر قانون سازی کرائیں تاکہ قوم کوجلد پتا چلے کہ کون کتنے پانی میں ہے۔

مزید : قومی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...