زائل کرم سے خوفِ حوادث کرے علیؓ

زائل کرم سے خوفِ حوادث کرے علیؓ
زائل کرم سے خوفِ حوادث کرے علیؓ

  

بیکس کو تخت کا وارث کرے علیؓ

دشمن کو رزقِ دوست کا باعث کرے علیؓ

 جوچاہے جس بشر کو عنایت کرے علیؓ

زائل کرم سے خوفِ حوادث کرے علیؓ

ہر گز ہوا چراغ کے لو تک نہ آسکے

کیا تاب ہے جو آگ کو پانی بجھا سکے

عاصی کو باغِ خلد کا فاتح کرے علیؓ

طالع کو اک اشارے میں صالح کرے علیؓ

تاریک شب کو صبح سے واضح کرے علیؓ

حق ہو، سوءے حق جسے راجح کرے علیؓ

گو ہو گناہ گار مگر رستگار ہو

سختی مرگ ہو، نہ لحد میں فشار ہو

دن کی طرح رات کو روشن کرے علیؓ

دامانِ شب کو غیرتِ گلشن کرے علیؓ

گِل کو جواہرات کا معدن کرے علیؓ

کندن ہو گر نظر سوئے آہن کرے علیؓ

ہل جائے لب اگر شہِ والاصفات کا

ہو آبِ تیغ میں اثر آبِ حیات کا

میر انیس

                                       Bekass Ko Takht Ka Waaris karay ALI

           Dushman Ko Rizq  e  Dost Ka Baais karay ALI

    Jo Chaahay Jiss Bashae Ko EnaayaT Karay ALI

  Zaail Karam Say Khaof  e  Hawaadiss Karay ALI

       Hargiz Charaagh HawaK Lao Tak Na Aa Sakay

                 Kia Taab Hay Jo Aag Ko Paani Bujhaa Sakay

           Aasi Ko Baagh  e  Khuld Ka Faaateh Karay ALi

                  Taaleh Ko Ik Ishaaray Men Saaleh KarayALI

             Taarek Shab Ko Subh Say Waazieh Karay ALI

                 Haq Hoo Soo  e  Haq Jisaqy Raajeh Karay ALI

                                             Go Ho Gunehgaar Magar Rastgaar Ho

                         Sakhti  e  marg Ho Na Lehd Men Fashaar Ho

                                       Din Ki Trah Raat Ko Rashan Karay ALi

Damaan  e  Shab Ko Ghairat  e  Gulshan Karay ALi

                           Gull Ko Jawahiraat Ka Maadan Karay ALI

      Kundan HoGar Nazar Sooey AAhan Karay ALI

                         Hill Jaaey Agar Lab SHah  e  Waal Sifaat Ka

                      Ho Aab  e  Taigh Men Asar Aab  e  Hayaat Ka

                                                                                                                                             Meer Anees

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -