ضربِ شبیر  کی آواز مرے کان میں آئے

ضربِ شبیر  کی آواز مرے کان میں آئے
ضربِ شبیر  کی آواز مرے کان میں آئے

  

اس قدرتیری حرارت مرے ایمان میں  آئے

موت بستر پہ نہ آئے مجھے ، میدان میں آئے

ساری دنیا کے یزیدوں کو مٹا سکتا ہے

تیرا ایثار اگر آج کے انسان میں آئے

کوئی کردار حسین ابنِ علیؓ سا لے کر

کوئی بھی قوم کسی عہد کے ایوان میں آئے

جب نویں شب کے چراغوں کو بجھا کر دیکھوں

تیرے اندر کا اُجالا مرے وجدان میں آئے

جب کسی شمر کا خنجر مجھے للکارتا ہے

ضربِ شبیر  کی آواز مرے کان میں آئے

اس کے جمہور کے لہجے میں دُعا مانگتا ہوں

ملک میرا نہ الہیٰ کسی بحران میں آئے

ہر طرف آج مظفر نہ بہے خون اس کا

اپنے اسلاف کاجذبہ جو مسلمان میں آئے

مظفر وارثی

                        Iss Qadar Teri Haraarat Miray Emaan  Men Aaey 

  Maot Bistar Pe Na Aaey Mujhay , Medaam Men Aaey

                                      Saari Dunya K yazeedon Ko Mita Sakta Hay

                                                     Tera Esaar Agar Aaj K Insaan Men Aaey

                  Koi Kirar Agar HUSSAIN  Ibn   e  ALI Ka Lay Kar

                                       Koi Bhi Qaom Kisi Ehd K Ewaan Men Aaey

Jab NAwen Shab K Charaaghon Ko Bujha Kar Dekhun

                          Teray Andar Ka ujaal Miray Wajdaan Men Aaey

                   Jab Kisi Shimr Ka Khanjar Mujhay Lalkaarta Hay

         Zarb  e  SHABEER Ki Awaaz Miray Kaan Men Aaey

                         Uss K  Jamhoor K Lehjay Men Dua Maagta Hun

                                Mulk Mera Na Elaahi Kisi Bohraan Men Aaey

     Har Taraf Aaj MUZAFFAR Na Bahay Khoon Uss Ka

                  Apnay Aslaaf Ka Jazba Jo Musalmaan Men Aaey

Muzaffar Warsi

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -