باقی رہتی ہے سچائی، سچائی کا سراغ

باقی رہتی ہے سچائی، سچائی کا سراغ
باقی رہتی ہے سچائی، سچائی کا سراغ

  

باقی رہتی ہے سچائی، سچائی کا سراغ

کھول گئے یہ رازِ نہاں اک بچہ اورچراغ

اس کے لیے بے معنی ہیں سونے کی طشتریاں

جس کے پاس ہوں اپنا جھنڈا، نعرہ اور چراغ

سارا دشت ہے جائے نماز اور ہر ٹیلہ محراب

اس مسجد میں روشن ہیں وہ سجدہ اور چراغ

جلتی ریت پہ کس نے اپنے لہو سے لکھا تھا

میں مر جاؤں تو ہوجائے پیدا اور چراغ

ظلم کی ایک کہانی دہراتے رہتے ہیں طریر

شام ، لہو ، صحرا ، سناٹا ، دریا اور چراغ

دانیال طریر

                         Baaqi Rehti Hay Sachaaee , Sachaaee Ka Suraagh

Khol Gaey Yeh Raaz  e  Nihaan Ik Bachha Aor  Charaagh

                                Uss K Liay Bemaani Hen Sonay Ki Tashtaryaan

                   Jiss K Paas Ho Apna Jhannda , Naara Aor Charaagh

Saara Dasht Hay Jaa  e  Namaaz , Aor Har Teela Mehraab

         Iss Masjid Men Roshan Hen Woh Sajda Aor charaagh

                     Jalti Rairt Pe Kiss Nay Apnay Lahu  Say Likha Tha

                       Main Mar Jaaun To Ho Jaaey Paida Aor Charaagh

Zulm Ki Aik Kahaani Dohraatay Rehtay Hen TAREER

          Shaam, Lahu, Sehra, Sannaata , Darya Aor Charaagh

                                                                                                                                                            Danyal Tareer

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -