کربل سے لے کر آج تک عاشور ہی جاری ہے

کربل سے لے کر آج تک عاشور ہی جاری ہے
کربل سے لے کر آج تک عاشور ہی جاری ہے

  

مرے سینے میں اک درد ہے جو روزِ الست کا ہے

اِک سوگ بھری آواز ہے اور لہجہ مست کا ہے

کچھ ایسے کھیل ہیں پریم کے وہ خود ہی کھیل رہا

کچھ گلے ہیں تو ہیں پر کیا کریں آقا نے منع کیا

اِک تیر کہ جس کے سامنے سر سبز پرندہ ہے

اِک پیاس کہ جس سے ہار کر پانی شرمندہ ہے

کہتے ہیں پانی بند تھا ، میں سُن کر خوب ہنسا

دو ایڑھیاں دھیان میں آ گئیں زم زم مجذوب ہنسا

ہونی کے مالک نے کہا ہونی کو ہونے دو

دن رہے ہمیشہ جاگتا اور رات کو سونے دو

سورج کی حدت بڑھ گئی جب کانپا حجت سے

اور آگ بھڑکنے لگ گئی خیموں کی اجازت سے

کچھ عالم پاک کتاب کے کچھ جاری فتوے تھے

قیدی تھے جن کے پاؤں پر افلاک کے بوسے تھے

سر ڈھانپنے والے بے ردا تقدیر تماشہ ہے

قدرت کے مالک قید ہیں دکھ اتنا زیادہ ہے

روتا ہوں لیکن اشک تو عابد نے بہائے ہیں

دکھی ہوں لیکن درد تو شبیرؑ نے پائے ہیں

ہم کالے کپڑے سلا چکے، عاشور منانا ہے

اور دس دن کا سوگ ہے پھر  ناچنا گانا ہے

جو گزری آل رسولؐ پر تیری فہم پہ بھاری ہے

کربل سے لے کر آج تک عاشور ہی جاری ہے

ندیم بھابھہ

                    

                                 Miray Seenay Men Ik dard Hay Jo Roz  e  Alast Say Hay

                                                             Ik Sog Bhari Awaaz Hay Aor Lehja Mast Ka hay

                      Kuch Aisy Khail Hen Praim kay Woh  Khud Hi Khail Raha

                          Kuch Gilay Hen To Hen Kia Karen AAQA Nay Mnaa Kia

                                                          Ik TeerKeh Jiss K Saamnay SarSabz Parinda Hay

                                        Ik Payaas Keh Jiss Say Haar kar Paani Sharminda Hay

                         Kehtay Hen Paani Band Tha, Main Sun Kar Khoob Hansa

Do Airrhiaan Dhayaan Men Aa Gaen ,ZAM ZAM Khoob Hansa

                                                                               Honi K Maalik Nay Kha Honi Ko Honay Do

                                                                                         Din Rahay Jaagta Aor Raat Ko Sonay Do

                                                    Sooraj Ki Hiddat Barrh Gai Jab Kaanpa Hujjat Say

                                   Aor Aag Bharraknay Lagg Gai Khaimon Ki Ijaazat Say

                                                 Kuch Aalam Pak Kitaab K Kuch Fatway Jaari Thay

                                                        Qaidi Thay Jin K Paaon Par Aflaak K Bosay Thay

                                    SarDhaanpnay Waalay Be Rida Taqder Tamaasha Hay

                                                            Qudrat K Maalik Qaid Hen dukh Itna Ziaada  hay

                                              Rota Hun Lekin Ashk To AABID Nay Bahaaey Hen

                       Dukhhi Hun Lekin Dard tTo SHABBEER Nay Paaey Hen

                         Ham Kaalay Kaprray SIla Chukay Aashoor manaana Hay

                                                  Aor Dass Din Ka Sog Hay Phir Naachna Gaana Hay

                                          Jo Guzri Aal  e  Rasoool Par Tiri Fehm Say Bhaari Hay

                                                Karballl Say Lay Kar Aaj Tak AaShoor Hi Jaari Hay

                                                                                                                                                                                    Nadeem Bhabha

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -