سخی تو ہے ہی شجاعت میں بھی غضب کا ہے

سخی تو ہے ہی شجاعت میں بھی غضب کا ہے
سخی تو ہے ہی شجاعت میں بھی غضب کا ہے

  

مخالفت کا نہیں، سلسلہ ادب کا ہے

یہ بات طے ہے کہ میرا حسینؑ سب کا ہے

ہوا ہے پیدا ہر انسان ایک فطرت پر

یہ بات ٹھیک ہے پر مسئلہ نسب کا ہے

یہ خاندان جو دونوں جہاں کا وارث ہے

سخی تو ہے ہی شجاعت میں بھی غضب کا ہے

میں پوچھتا بھی اگر ان سے کربلا بارے

انہوں نے کہنا تھا جو فیصلہ ہے رب کا ہے

وہ ساری جنگ محمد سے دشمنی کی تھی

جو کربلا میں ہوا اصل میں تو کب کا ہے

فرحت عباس شاہ

                                  Mukhaalfat Ka Nahen Silsila Adab Ka  Hay

 Yeh Baat Tay Hay Keh Mera HUSSAIN Sab Ka Hay

                                                    Hua Hay Pida Har Insaan Aik Fitrat Par

                       Yeh Baat Theek Hay Par Maslaa Nasab Ka Hay

                   Yeh Khaandaan Jo Dono Jahaan Ka Waaris Hay

       Sakhi To Hay Hi , Shujaat Men Bhi Ghazab Ka Hay

                       Main Poochta Bhi Agar Un Say Karbla Baaray

 Unhon Nay Kehna Tha Jo Faisala hay RABB Ka Hay

 Wo Saari Jang MUHAMMAD Say Dushmani Ki Thi

                               Jo Karblaa Men Hua Asl Men To Kab Ka Hay

                                                                                                                                Farhat Abbas Shah

مزید :

شاعری -سنجیدہ شاعری -