بھارتی وزیراعظم کی آمد اور نیشنل ایکشن پلان، سیاسی اور سفارتی حلقوں میں زیر بحث

بھارتی وزیراعظم کی آمد اور نیشنل ایکشن پلان، سیاسی اور سفارتی حلقوں میں زیر ...

اسلام آباد سے ملک الیاس:

گزشتہ دنوں بھارتی وزیر اعظم کے اچانک دورہ پاکستان نے سیاسی و سماجی حلقوں میں نئی بحث چھیڑ دی ہے ،زیادہ تر سیاسی حلقوں نے نریندر مودی کے دورہ پاکستان کو خوش آئند قراردیا ہے جبکہ مذہبی جماعتوں نے مسئلہ کشمیر سمیت دیگر حل طلب مسائل کے حوالے سے تحفظات کااظہار کیا ہے ،عوامی حلقوں کے مطابق نریندر مودی کا دورہ پاکستان خوش آئند بات ہے ،معاملات حل کرنے کیلئے دونوں ملکوں کے سربراہان کا ملنا نہایت ضروری ہے ،رینجرز کے اختیارات ، نیشنل ایکشن پلان کے حوالے سے وفاقی حکومت اورسندھ حکومت میں معاملات تاحال کسی نتیجہ پر نہیں پہنچ سکے ادھر وفاقی وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ نیشنل ایکشن پلان کی بدولت نہ صرف امن و امان کی صورتحال میں واضح بہتری آئی ہے بلکہ دہشت گردی کے گرداب میں پھنسی قوم کا حوصلہ بھی بلند ہوا ہے ،نیشنل ایکشن پلان کسی ایک سیاسی جماعت، گروہ یا حکومتی ادارے کا پلان نہیں بلکہ ایک قومی پلان ہے جس کو پوری قوم کی حمایت حاصل ہے، نیشنل ایکشن پلان پر پوری قوت اور عزم سے عمل درآمد جاری رہے گا ۔ انکا کہنا تھا کہ ملکی تاریخ میں انٹر نیشنل این جی اوز کے حوالے سے پہلی بار نئی پالیسی کے تحت دو بین الاقوامی این جی اوز کو باقاعدہ کام کرنے کی اجازت دی گئی ہے جس میں قطر چیریٹی اور ایم ایس ایف بیلجئم شامل ہیں۔اب تک 127انٹرنیشنل این جی اوز نے نئی پالیسی کے تحت رجسٹریشن کے لئے باقاعدہ درخواست دی ہے وزارتی کمیٹی کے ممبران بقیہ این جی اوز کی درخواستوں پرفیصلے کے عمل کو بھی جلد سے جلد مکمل کریں، نئے ضابطہ کار کے تحت منظوری حاصل کرنے والی آئی این جی اوز کو ملک بھر میں مکمل حکومتی سپورٹ مہیا کی جائے گی ۔نئی پالیسی کا مقصد حکومت اور عالمی این جی اوز کی پارٹنر شپ کو مزید مستحکم کرنا اور آئی این جی اوز کے کام کو آسان بنانا ہے۔

وزیر اعظم نوازشریف نے وزارت پانی وبجلی کو صنعتی صارفین کے لئے بجلی کے نرخوں میں 3 روپے فی یونٹ کمی کے اعلان پر فوری عمل درآمد کی ہدایت کی ہے صنعتی صارفین کیلئے بجلی کے نئے نرخوں کا اطلاق یکم جنوری 2016 سے ہو گا ۔ حکومت زرعی شعبے کے لئے بجلی کے نرخ پہلے ہی کم کر چکی ہے ۔ زرعی شعبے کے لئے فی یونٹ زیادہ سے زیادہ قیمت 10.35 روپے اور کم سے کم 8روپے 80 پیسے ہے ۔ 300یونٹ تک بجلی استعمال کرنے والے گھریلو صارفین کو رعایتی نرخوں پر بجلی فراہم کی جا رہی ہے ۔ گھریلو صارفین کے لئے فی یونٹ قیمت بالترتیب 2روپے ،5.79 ،8.11 روپے اور 10.20 روپے ہے ۔ صنعتی صارفین کے لئے نرخوں کا نیپرا سے منظوری کے بعد نوٹیفکیشن جاری ہو گا ۔ وزیر اعظم کے اعلان سے اقتصادی ترقی کی رفتار تیز صنعتی شعبے کو ریلیف ملے گا ۔

ادھر سندھ میں گورنر راج کے آپشن کو وزیر دفاع ، پانی و بجلی خواجہ محمد آصف نے خارج ازمکان قرار دیا ہے انکا کہنا تھا کہ سندھ میں گورنر راج کا آپشن زیر غور نہیں ، آپریشن کے ڈھائی سالہ فوائد کو ضائع نہیں ہونے دینگے ، کراچی کا امن پاکستان کا امن ہے ، دہشتگردی اور کرپشن آپس میں جڑے ہوئے ہیں سیاسی اعتراضات کرنا پیپلز پارٹی کا حق ہے اس کا ہم برا نہیں مناتے مگر اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم کراچی آپریشن کو رول بیک کر رہے ہیں۔ دہشتگردی کے خاتمے کے آپریشن کو منطقی انجام تک پہنچا کر دم لیں گے ۔ لوگوں نے اتنی زیادہ قربانیاں دی ہیں ان کی قربانیوں کو ضائع جانے نہیں دینگے دہشگردی اور کرپشن آپس میں جڑے ہوئے ہیں دہشتگردی اور کرپشن کا مکمل خاتمہ کیا جائے گا اس آپریشن میں پیپلز پارٹی ہمارا ساتھ دے گی اور ہم ایک بیج پر آکر جرائم کا مکمل خاتمہ کرینگے ۔، وفاق اور سندھ حکومت میں غلط فہمی ملکی مفاد میں نہیں، غلط فہمی کو دور کرنے کے لئے وزیر اعظم نواز شریف اور وزیراعلیٰ سندھ میں جلد ملاقات ہو گی اس حوالے سے ن لیگ کے رہنما سینیٹر عبدالقیوم کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف جنگ آدھے راستے پر نہیں چھوڑی جا سکتی ، چوہدری نثار کے کندھے پر دہشت گردی کے خلاف جنگ کے حوالے سے بھاری ذمہ داری ہے ان پر بلا وجہ تنقید مناسب نہیں ، بھارت کی طرف سے پاکستان کے ساتھ تعلقات بحال کرنا پاکستان کے موقف کی فتح ہے ، جب تک بھارت مسئلہ کشمیر سمیت دیگر مسائل کے حوالے سے عملی قدم نہیں اٹھاتا تعلقات میں بریک تھرو نہیں ہو سکتا ۔ بھارت نے کشمیری حریت لیڈرز کے قائدین سے ملاقات پر اعتراض کر کے مذاکرات منسوخ کر دیئے تھے لیکن اب مذاکرات کی بحالی اور بھارتی وزیر اعظم کی پاکستان آمد پاکستان کے موقف کی تائید ہے ، کیونکہ بھارت نے اتنا بڑا یوٹرن لیا، بھارت یہ سمجھتا ہے کہ وہ لولی پاپ دیکر پاکستان کو مطمئن کرے گا تو یہ ممکن نہیں ہے کیونکہ قوم جب تک بھارت مسئلہ کشمیر سمیت دیگر مسائل کے حل کے لئے عملی اقدامات نہیں اٹھائے گا مطمئن نہیں ہو گی، بھارت کو چاہیئے کہ سیاچن سے فوج واپس بلا کر مسئلہ کشمیر کے حل کی جانب پہلا قدم اٹھائے، ماضی کے تلخ تجربات لوگوں کے ذہنوں میں نقش ہیں انکا کہنا تھا کہ سندھ میں رینجرز کے اختیارات کے حوالے سے وفاقی حکومت اور سندھ حکومت کے درمیان غلط فہمی پاکستان کے مفاد میں نہیں ۔

ذرائع نے دعوی کیا ہے کہپاکستان تحر یک انصاف نے پارٹی انتخابات اور ممبر شپ مہم کا باقاعدہ اعلان 10جنوری سے پہلے کر نیکا فیصلہ کر لیا ‘تمام صوبائی وضلعی آرگنائزر سمیت دیگر مر کزی اور صوبائی عہدیدارختم کر دیئے جائیں گے۔ تحریک انصاف کے پارٹی الیکشن کمیشنر تسنیم نورانی نے تمام معاملات کو حتمی شکل دیدی ہے جسکے بعد فیصلہ کیا گیا ہے کہ جنوری کے پہلے حصے میں ہی پارٹی انتخابات کے سلسلے میں 2ماہ کیلئے ممبر شپ مہم اور پارٹی انتخابات کا باقاعدہ اعلان کر دیا جا ئیگااور ممبرشپ کا اعلان ہوتے ہی تمام مر کزی ‘صوبائی اور ضلعی عہدیدار ختم کر دےئے جائیں گے اور نگران سیٹ اپ قائم کیا جا ئیگا۔

مزید : ایڈیشن 1


loading...