جدید اور معیاری سیرت و تصوفیونیورسٹی قائم کریں گے،سعید الحسن شاہ

جدید اور معیاری سیرت و تصوفیونیورسٹی قائم کریں گے،سعید الحسن شاہ

  

لاہور(سٹی رپورٹر )صوبائی وزیر اوقاف سید سعیدالحسن شاہ نے کہا ہے کہ عصر حاضر میں انسانیت کو درپیش مختلف النوع روحانی، فکری اور تہذیبی چیلنجز سے نجات اسوۂ حسنہ کی مکمل پیروی میں مضمر ہے ، اس سلسلے میں نوجوان نسل کو اسلام کی مقدس اور پاکیزہ تعلیمات کے بارے میں مکمل آگہی اہم عصری تقاضا ہے تاکہ مستقبل کی راہ کو حاصل کرنے کی صحیح روحانی اور فکری تربیت سے حال اور مستقبل کے مسائل کو احسن طریقے سے حل کیا جائے، یہ بات انہوں نے ہفتہ کے روز مختلف وفود سے ملاقات میں کہی، انہوں نے کہا کہ لاہور میں جدید اور معیاری سیرت و تصوف یونیورسٹی کا قیام عمل میں لایا جائے گا تاکہ اسلام اور نبی پاک ﷺ کی تعلیمات اور ریسرچ بارے بہتر حقائق سامنے لائے جا سکیں جبکہ تمام درباروں پر تصوف اکیڈمیوں کا دائرہ کار بھی وسیع کیا جائے گا۔

جس سے حضورنبی کریم ؐنے تاریخ انسانی کے تاریک ترین عہد میں علم و آگہی، حکمت و دانش، روحانی، فکری نجات اور انسانیت کی فلاح وبہبود کے جو چراغ روشن کیے تھے، انسانیت تا بہ ابد اس سے روشن و تاباں رہے گی، انہوں نے کہا کہ حضور نبی کریمؐ نے اپنے اسوۂ مبارکہ کے ذریعے عرب کے تاریک ریگستانوں میں انسانیت کی فلاح کی جو شمع روشن کی اس کی کرنوں سے انسانی تہذیب و تمدن ہمیشہ روشن و تاباں رہے گا، ڈاکٹر منیر اظہر نے کہا کہ اسلام پوری کائنات کے لیے امن وآشتی کا پیامبر ہے ، انہوں نے کہا کہ اسلام کی امن و آشتی کی تعلیمات کے بارے میں نوجوان نسل کی فکری آبیاری ہم سب کی اجتماعی ذمہ داری ہے، محکمہ اوقاف کو روایتی محکمہ بناے کی بجائے جدید محکمہ بنانے کے لئے اقدامات پر کام شروع کر دیا گیا ہے اس سلسلے میں تمام درباروں پرزائرین کو ہر طرح کی سہولیات کی فراہمی کے لئے راؤنڈ دی کلاک لنگر خانوں ،وضو خانوں اور طہارت خانوں کا قیام عمل میں لائے جائیں گے جبکہ درباروں پر پاپوش اور طہارت خانوں پر عائد فیس کے خاتمہ کا بھی جائزہ لیا جا رہا ہے، انہوں نے کہا کہ ہمیں تجدید عہد کرنا ہوگاکہ ختم الرسل نبیؐ آخر الزماں کی مقدس تعلیمات، اسوہ حسنہ اور فرمودات کے مطابق اپنی انفرادی اور اجتماعی زندگی کو ڈھالیں، اسلام حقوق اللہ کی ادائیگی کے ساتھ ساتھ حقوق العباد کی بجا آوری کو بھی یکساں اہمیت دیتا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -