بہاولپور صوبہ بحالی کیلئے فرید گیٹ پر مظاہرہ،وزیراعلیٰ قافلے کاروٹ تبدیل

بہاولپور صوبہ بحالی کیلئے فرید گیٹ پر مظاہرہ،وزیراعلیٰ قافلے کاروٹ تبدیل

  

بہاول پور(بیورورپورٹ ، ڈسٹرکٹ رپورٹر) وزیراعلیٰ پنجاب کی بہاولپور میں کابینہ کا اجلاس کے موقع پرجماعت اسلامی ،تحریک صوبہ بہاول پور کے زیراہتمام صوبہ بحالی کے لیے مظاہرہ کیا گیا۔مظاہرہ میں جماعت اسلامی جنوبی پنجاب کے امیر ڈاکٹر سید وسیم اختر،تحریک صوبہ بہاول پور کے چیئرمین جام حضور(بقیہ نمبر54صفحہ7پر )

بخش ،سیکرٹری جنرل نصراللہ ناصر ،جماعت اسلامی کے ضلعی امیر سید ذیشان اختر،بہاول پور صوبہ محاذ کے صدر سید مجید ہاشمی،عوامی تحریک بحالی صوبہ بہاول پور ملک اجمل،راجہ شفقت الرحمن ،تحریک صوبہ بحالی کے رہنماء اکرم انصاری ،کسان اتحاد کے رہنماء چوہدری عبدالمطلب،ن لیگ کے رہنماء وسیم قریشی،کسان بورڈ کے رہنماء ملک غلام مصطفی چنڑسمیت جماعت اسلامی کے کارکنان اور شہریوں کی بہت بڑی تعداد شریک تھے مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر سید وسیم اختر نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان کو بہاول پور صوبہ بحالی پر یو ٹرن نہیں لینے دیں گے پنجاب اسمبلی سے منظور ہونے والی قرارداد کے مطابق صوبہ بہاولپور بحال کیا جائے صوبہ بہاولپور کی بحالی کے سوا وہ کوئی دوسرا آپشن قبول کرنے کے لئے تیار نہیں ہے صوبہ جنوبی پنجاب بہاولپور کے صوبے کا متبادل نہیں ہو سکتا اس لئے وہ صوبہ بہاولپور کی بحالی چاہتے ہیں تاکہ ان کے مسائل حل ہو سکیں اور وہ اپنی مرضی کے ذریعے قومی ترقی میں اپنا کردار ادا کر سکیں ۔انہوں نے کہا کہ این ایف سی ایوارڈ میں بہاول پور کا حصہ 107 ارب روپے ہیں جو کہ آج تک ہمیں نہیں ملے جس کے باعث علاقہ میں احساس محرومی میں اضافہ ہوا ہے ۔جام حضور بخش اور نصراللہ ناصر نے کہا کہ بہاول پور ڈویژن ملکی ضروریات کی 33 فیصد گندم اور 33 فیصد کپاس پیدا کرتا ہے جی ڈی پی میں بہاول پور کا باقی سارے ملک سے زیادہ حصہ ہے اور کہا جاتا ہے کہ بہاول پور صوبہ کی فیزیبلٹی نہیں بنتی بہاول پور صوبہ بحال کیا جائے تو ہم کبھی لاہور یا اسلام آباد کی طرف نہیں دیکھے گے ہم معاشی طور پر پورے ملک میں سب سے زیادہ خوشحال ہونگے ،سید ذیشان اختر نے کہا کہ بہاول پور ایک کامیاب سرپلس صوبہ تھا جو کہ حکمرانوں نے ملک کا پسماندہ علاقہ بنا دیا ہے ۔ملک اجمل اور راجہ شفقت نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بہاول پور کی محرومیوں کے ازا لہ کا ایک ہی حل ہے کہ اس کی صوبائی حیثیت کو بحال کیا جائے ۔ وزیر اعلی پنجاب عثمان بزدار نے اسلامیہ یونیورسٹی میں صوبائی کابینہ میں شرکت کے لیے فرید گیٹ والے روٹ سے آنا تھا مگر بہاول پور صوبہ کے حامیوں کے مظاہرے کی وجہ سے انہوں نے سرکٹ ہاؤس سے اسلامیہ یونیورسٹی آتے ہوئے فرید گیٹ کی طرف سے آنے کی بجائے لائبریری چوک سے ٹرن لیتے ہوئے پرانے سی ایم ایچ چوک سے ہوتے ہوئے یونیورسٹی آگئے اور مظاہرین فرید گیٹ پر ہی انتظار کرتے رہ گئے ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -