رانا ثنااللہ کو دراصل کس اعلیٰ عہدیدار سے اپنی گرفتاری کا وقت سے قبل پتہ چل گیا تھا؟ بالآخر نام سامنے آگیا

رانا ثنااللہ کو دراصل کس اعلیٰ عہدیدار سے اپنی گرفتاری کا وقت سے قبل پتہ چل ...
رانا ثنااللہ کو دراصل کس اعلیٰ عہدیدار سے اپنی گرفتاری کا وقت سے قبل پتہ چل گیا تھا؟ بالآخر نام سامنے آگیا

  



اسلام آباد (ویب ڈیسک) رانا ثنا اللہ کو عدالت سے ضمانت پررہائی مل گئی ہے اور اب بالآخر انہوں نے وقت سے پہلے گرفتاری کی اطلاع دینے والی شخصیت کا نام بتادیا۔

روزنامہ جنگ کے مطابق مسلم لیگ ن کے رہنما اور ممبر قومی اسمبلی رانا ثنا اللہ کا کہنا ہے کہ اینٹی نارکوٹکس فورس کا گرفتار کرنا بہت حیران کن واقعہ تھا، سابق ڈی جی ایف آئی اے بشیر میمن نے گرفتاری کا بتایا تھا، وزیراعظم میرا نام لے کر گرفتار کرنے کی ہدایات دیتے رہے، اس طرح گرفتاری سے لگا کہ ملک میں جنگل کا قانون ہے۔

جیو  کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے رانا ثنااللہ کا کہنا تھا کہ معاملہ پارلیمان میں رکھوں گا، جوڈیشل یا پارلیمانی کمیشن نہ بنا تو عدالت سے رجوع کروں گا۔رانا ثنا اللہ نے بتایا کہ مسلم لیگ ن میں منحرف گروپ بنانے میں رکاوٹ بننے پر میرے خلاف کارروائی کی گئی۔ جیل میں گزرے ایام کے حوالے سے بات کرتے ہوئے رہنما ن لیگ نے کہا کہ جن حالات میں جیل میں رکھا کوئی اور ایسے نہیں رہ سکتا، فرش پر لیٹا، ساری رات بندہ سو نہیں سکتا تھا۔

ممبر قومی اسمبلی نے بتایا کہ آنکھ کے علاج پر کہا گیا ہدایت ہے کہ جیل اسپتال میں قدم بھی نہ رکھوں، نواز شریف اور شہباز شریف میرے اہل خانہ سے رابطے میں رہے۔جے یو آئی ف کے مارچ کے حوالے سے بات کرتے ہوئے رانا ثنا اللہ نے بتایا کہ مولانا نے یکطرفہ فیصلہ کیا لیکن بہت طاقتور احتجاج کیا، ن لیگ اور پیپلزپارٹی نے دل سے مولانا کا ساتھ نہیں دیا۔

یاد رہے کہ اے این ایف نے رانا ثنااللہ کو 2 جولائی 2019 کو فیصل آباد سے لاہور جاتے ہوئے گرفتار کیا تھا اور اے این ایف نے دعویٰ کیا تھا کہ رانا ثنا کی گاڑی سے بھاری مقدار میں منشیات برآمد کی گئی۔رانا ثنا اللہ نے اپنی گرفتاری کے خلاف عدالت میں مقدمہ دائر کیا اور پھر 24 دسمبر کو لاہور ہائیکورٹ نے رانا ثنا اللہ کو ضمانت پر رہا کرنے کا حکم دیا، رانا ثنا اللہ کی جانب سے 10، 10 لاکھ روپے کے دو حفاظتی مچلکے جمع کرائے جانے کے بعد 26 دسمبر کو انہیں رہا کر دیا گیا۔

انسداد منشیات فورس نے پاکستان مسلم لیگ کے رہنما رانا ثنا اللہ کی ضمانت پر رہائی کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے سپریم کورٹ میں جانے کا اعلان کیا ہے۔

مزید : علاقائی /اسلام آباد