شعیب اختر بھی ’یوٹرن‘ لینے لگے، دنیش کنیریا سے متعلق بیان پر اب ان کا کیا کہنا ہے؟ جان کر آپ بھی حیران رہ جائیں

شعیب اختر بھی ’یوٹرن‘ لینے لگے، دنیش کنیریا سے متعلق بیان پر اب ان کا کیا ...
شعیب اختر بھی ’یوٹرن‘ لینے لگے، دنیش کنیریا سے متعلق بیان پر اب ان کا کیا کہنا ہے؟ جان کر آپ بھی حیران رہ جائیں

  



لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ ٹیم کے مایہ ناز سابق فاسٹ باﺅلر شعیب اختر نسلی امتیاز کے اپنے بیان سے راہ فرار اختیار کرنے لگے جن کا کہنا ہے کہ انہوں نے ٹیم کلچر کی بات نہیں کی بلکہ کچھ کھلاڑی ایسا کرتے تھے۔

تفصیلات کے مطابق شعیب اختر نے اپنے بیان میں کہا کہ 2 دن سے دیکھ رہا ہوں میری بات کو نسلی تعصب کا رنگ دے کر ایشو بنانے کی کوشش کی گئی حالانکہ میں نے ٹیم کلچر کی بات نہیں کی بلکہ کہا کہ کچھ کھلاڑی ایسا کرتے تھے اور ایک، دو کھلاڑی ہر جگہ موجود ہوتے ہیں جو اس طرح کی بات کر دیتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ایک، دو کھلاڑیوں نے نسلی تعصب کی بات کی تو میں ان کیساتھ سختی سے نمٹا اور کہا کہ تمہیں اٹھا کر باہر پھینک دوں گا۔ ہمارا یہ کلچر نہیں ہے، میرے ساتھ موجود ایک ساتھی نے بھی میری بات کو سپورٹ کیا اور کہا کہ تم لوگوں کو یہ بات نہیں کرنی چاہیے تھی۔

سابق ٹیسٹ کرکٹر نے کہا کہ جو بات میں نے کی وہ 15برس پرانی ہے، اس وقت پاکستان میں انتہاءپسندی عروج پر تھی، آپ کو تو میری بات کو سپورٹ کرنا چاہیے کہ شعیب اختر نے واقعے کو ادھر ہی دبا دیا۔ان کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان نے کرتار پور بارڈر کھول کر غیر مسلموں کو مذہبی آزادی کیلئے گلے لگایا ہے، سب سے زیادہ نسلی تعصب پر مسلمانوں کو رگڑا لگایا جاتا ہے، ہم یہ چاہتے ہیں کہ جو مسلمانوں کے ساتھ ہو رہا ہے، وہ کسی اور کے ساتھ نہ ہو۔

مزید : کھیل


loading...