لو میرج کا خواب سجانے والی طالبہ بکتی، لٹتی رہی

لو میرج کا خواب سجانے والی طالبہ بکتی، لٹتی رہی
لو میرج کا خواب سجانے والی طالبہ بکتی، لٹتی رہی

  

لاہور  (ویب ڈیسک) رائے ونڈ کے علاقے ریلوے کالونی گلبرگ ٹاﺅن کے حجام کی بیٹی اور نویں جماعت کی طالبہ کو محبت کے جھوٹے جال میں پھنسا کر جسم فروشی کیلئے فروخت کرنے والے محلے دار لزم ندیم اور خریدار بوٹا کو پولیس نے گرفتار کرکے مقدمہ درج کرلیا۔ بتایا گیا ہے کہ ندیم ڈیڑھ سال قبل طالبہ کو لیو میرج کے بہانے لاہور لے گیا جہاں اس نے مبینہ طور پر اسے داتادربار کے پاس گوجرانوالہ کے رہائشی عنصر کے ہاتھوں ڈیڑھ لاکھ روپے میں فروخت کردیا۔ عنصر اسے لاہور سے لے گیا جہاں اس کی ساس اور بیوی نے طالبہ کو دھندے پر لگانے کی کوشش کی اور انکار پر اس پر بہیمانہ تشدد کرتے رہے اس کے ناخن پلاس سے کھینچے گئے، زبان قینچی سے کاٹی گئی، استرے سے سر کے بال کاٹ دئیے اور بہیمانہ تشدد کیا جاتا رہا۔ مجبور طالبہ جسم فروشی پر مجبور ہوگئی تو اسے نگرانی کے ساتھ لاہور، کراچی، گوجرانوالہ اور دیگر شہروں میں بھیجا جاتا رہا۔ متاثرہ طالبہ نے بتایا کہ عنصر نے اس کے ساتھ جعلی نکاح بھی کررکھا تھا، تشدد کے باعث وہ پوری طرح بولنے کے قابل نہیں رہی اس کی زبان کے ساتھ ساتھ اس کا ذہنی توازن بھی بگڑگیا اور اسی دوران وہ حاملہ ہوگئی لیکن ملزموں نے اس کا حمل گرادیا۔ طالبہ نے بتایا کہ عنصر نے اس کی حالت بگڑنے پر ایک دوسرے دلال بوٹا نامی شخص کے آگے بیچ ڈالا۔ بوٹا لاہور کی بدنام نائیکہ بٹنی کا دلال ہے گزشتہ روز وہ اسے جسم فروشی کیلئے رکشے میں بٹھا کر سلور سٹار ہوٹل لے جارہے تھے کہ اس نے مصری شاہ تھانہ کی پولیس موبائل وین دیکھ کر رکشے سے چھلانگ لگادی، اس کی نشاندہی پر ملزم کو حراست میں لے لیا۔ طالبہ کے والدین کو اطلاع کی جو اسے لے کر رائے ونڈ پہنچے۔ تھانہ سٹی رائے ونڈ نے مرکزی ملزم ندیم کو حراست میں لے لیا جبکہ ملزم بوٹا قبل ازیں پکڑا جاچکا تھا، ملزمہ پروین، بٹنی اور شمیم کو جیل بھجوادیا گیا ہے جبکہ عنصر مفرور ہے۔

مزید : لاہور