وزیر اعظم کا معاشی ٹیم کو مہنگائی میں اضافہ روکنے اور عوام کو ریلیف فراہم کرنے کا حکم

      وزیر اعظم کا معاشی ٹیم کو مہنگائی میں اضافہ روکنے اور عوام کو ریلیف ...

  



اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک،آئی این پی،این این آئی) وزیراعظم عمران خان نے معاشی ٹیم کو مہنگائی میں مزید اضافہ روکنے اور عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف فراہم کرنے کی ہدایت کردی۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے معاشی ٹیم سے ملاقات کی جس میں وفاقی وزراء، مشیر اور معاونین خصوصی شریک تھے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم کو ملک میں مہنگائی کی صورتحال پر بریفنگ دی گئی۔

وزیراعظم/حکم

اسلام آباد(سٹاف رپورٹر)وزیراعظم عمران خان نے واضح کیا ہے کہ پارٹی ڈسپلن کے معاملے میں کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جائے گا اور تما م فیصلے پارٹی رولز کے مطابق کئے جائینگے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے خیبرپختونخوا کابینہ سے فارغ کئے جانے والے عاطف خان اور شہرام ترکئی سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔تفصیلات کے مطابق خیبرپختونخوا کے برطرف وزراء عاطف خان اور شہرام ترکئی نے گزشتہ روز وزیراعظم سے ملاقات کرکے اپنے موقف سے آ گاہ کیا،سابق وزراء نے برطرفی سے متعلق اپنے تحفظات،خیبرپختونخوا حکومت کی موجودہ صورتحال اور سازشی عناصر کے حوالے سے وزیراعظم کو آگاہ کیا۔ اس دوران وزیراعظم نے ان کا مکمل موقف سنا۔ ذرائع کے مطابق ملاقات کے دوران برطرف وزراء نے ہٹائے جانے کے معاملے پر گلے شکوے کئے اور کہاکہ ہماراموقف نہیں سنا گیاا ور ہمیں سنے اور بتائے بغیر عہدے سے ہٹادیاگیا حالانکہ ہم نے کوئی انوکھی بات نہیں کی اور اختلاف رائے جمہوریت کا حسن ہے۔انہوں نے کہاکہ ہم نے پارٹی ڈسپلن کی کوئی خلاف ورزی نہیں کی بلکہ وہی بات کی جو معمول میں ہوتی رہتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم پہلے بھی پارٹی کے ساتھ مخلص اور وفادار تھے اور اب بھی رہیں گے۔علاوہ ازیں دونوں ارکان صوبائی اسمبلی نے مزیدکہا کہ وزیراعظم جو ذمہ داری دیں گے ہم قبول کریں گے۔ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے اندرونی معاملات کی میڈیا پر تشہیر پر ناراضگی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پارٹی کے نظم ونسق پر کبھی سمجھوتہ نہیں کیا،وزراتیں واپس لینے کا فیصلہ مشکل تھا، آپ دونوں خیبر پختونخوا میں میرے قابل اعتماد ساتھی ہیں میں نے کبھی شخصیات کو اہمیت نہیں دی اور ہمیشہ مشکل فیصلے کیے،امید ہے مستقبل میں آپ لوگ مزید محنت کریں گے۔بعدازاں گندم اور آٹا بحران کے حوالے سے منعقدہ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم عمران خان نے کہا کہ گندم بنیادی ضرورت ہے عوام کو کسی قسم کی قلت کا سامنا نہ کرنا پڑے، ملکی ضرورت کے مطابق گندم کی فراہمی کیلئے ہر ممکنہ اقدامات اٹھائے جائیں، ملک میں گندم یا آٹے کی کمی کی شکایت نہ ہو، فوری فراہمی کو یقینی بنایا جائے، ذخیرہ اندوزی اور ناجائزمنافع خوری کی روک تھام پر بھی توجہ دی جائے۔وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ آنے والے مہینوں میں گندم کی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے پیشگی منصوبہ بندی کی جائے اور اس ضمن میں تخمینوں اور طریقہ کار کو جلد از جلد حتمی شکل دی جائے۔اجلاس میں وزیرِ برائے نیشنل فوڈ سیکیورٹی مخدوم خسرو بختیار، وزیر منصوبہ بندی اسد عمر، وزیرِ توانائی عمر ایوب، مشیر خزانہ ڈاکٹر عبدا لحفیظ شیخ اور سینئر افسران شریک ہوئے اجلاس میں گندم کی صورتحال،ملکی ضروریات اور موجودہ سٹاک سے متعلق گفتگو کی گئی اور مستقبل کی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے آئندہ کے لائحہ عمل پر بات کی گئی۔ اجلاس میں وزیراعظم عمران خان کو سیکرٹری خوراک نے گندم اور آٹا کی حالیہ صورتحال اور بحران کی وجوہات پر بریفنگ دی گئی۔وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ ملکی ضروریات کو مد نظر رکھتے ہوئے اقتصادی رابطہ کمیٹی گندم کی درآمد کی اجازت دے چکی ہے جبکہ گندم کی درآمد پر کوئی ٹیکس نہیں ہوگا۔وزیرِ اعظم کو بتایا گیا کہ ملک میں فصلوں،اجناس کی پیداوار کے اعداد و شمار مرتب کرنے کے نظام (کراپ رپورٹنگ سسٹم) کو اپ گریڈ کیا جا رہا ہے تاکہ فصلوں کی پیداوار کے بارے میں درست ڈیٹا بروقت میسر آئے۔علاوہ ازیں وزیر اعظم عمران خان سے وزیر اعلی بلوچستان جام کمال خان نے ملاقات کی،جس میں بلوچستان میں جاری ترقیاتی منصوبوں اور صوبے سے متعلقہ مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔

عمران خان

مزید : صفحہ اول