پاکستانی نوجوانوں کو امریکی میں کاروبار کے مواقع فراہم کرنا چاہتے ہیں، محمد صدیق

      پاکستانی نوجوانوں کو امریکی میں کاروبار کے مواقع فراہم کرنا چاہتے ہیں، ...

  



لاہور(پ ر) پاکستانی نژاد امریکی محمد صدیق نے لاکھوں پاکستانی نوجوانوں کی امریکی کاروباری کمپنیوں اور تاجروں تک رسائی کو ممکن بنانے کے لیے مفت تربیت کا اعلان کردیا۔ آن لائن طریقہ کار کے تحت نوجوانوں کو امریکہ میں کاروبار کے طریقہ کار کی آگاہی دی جائیگی۔ امریکہ میں دنیا کے سب سے زیادہ تیس لاکھ چھوٹے کاروبار ہوتے ہیں 4.8 ٹریلین ڈالر کا سالانہ کاروباری حجم ہے۔ عوامی خدمت کے جذبے کے تحت پاکستانی نوجوانوں کو امریکہ میں کاروبار کے مواقع فراہم کرنا چاہتے ہیں تعلیم، عمر، زبان کی کوئی قید نہیں ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے آج لاہور پریس کلب میں فیوچر وژن کے ڈائریکٹر سوشل میڈیا شہیر العظیم اور میڈیا مینجر سرور حسین کے ہمراہمیڈیا کو بریفنگ دیتے ہوئے کیا۔ ماہر امور سرمایہ کاری اور کاروباری ترقی اور ایرن کیش فلووید آؤٹ انویسٹمنٹ کے بانی پاکستانی نژاد امریکی محمد صدیق نے کہا کہ پاکستان کے نوجوان انتہائی باصلاحیت ہیں۔ مواقع تک رسائی کی ضرورت ہے کوئی ایسا کام نہیں ہے جو پاکستانی نوجوان نہ کرسکے انہوں نے کہا کہ امریکہ نے تیس لاکھ مختلف چھوٹے کاروبار ہو رہے ہیں جس میں سالانہ 4.8 ٹریلین ڈالر کا سالانہ کاروبار ہوتا ہے۔ پاکستان کے نوجوان بغیر کسی معاوضے کے امریکی کاروبار تک رسائی حاصل کرسکتے ہیں اور گھر بیٹھے ماہانہ ڈالرز کما سکتے ہیں اس کے لیے کسی معاوضے کی ضرورت نہیں ہے۔ صرف تعلیم کو استعمال کرنا پڑے گا کسی بھی زبان میں وہ امریکی کاروبار تک اپنی رسائی کو ممکن بنا سکتے ہیں۔ پنجابی، پشتو، سندھی، بلوچی اور اردو کسی بھی زبان میں آپ آن لائن مختلف امریکی کمپنی یا تاجر سے بات اور ڈیلنگ کرسکتے ہیں اس کے لیے ویلتھ کیش فلو چیلنجز ڈاٹ کام کے ذریعے تربیت دی جائے گی۔

ہماری طرف سے ایک پیسہ بھی نہیں لیا جائے گا۔ پہلے بھی ہم ایک پروگرام کے تحت پاکستان کے دو لاکھ نوجوانوں کو تربیت دے چکے ہیں۔ پاکستانی نوجوانوں کو ڈالر کمانے کا طریقہ بتارہے ہیں۔ ٹیکنالوجی کا دور ہے، مواقع تک رسائی کی تربیت دی جائے گی اس کے لیے سمارٹ فون اور بینک اکاؤنٹ ہونا ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہمارے ویب پیکج پر آئیں اور اپنی خواہش بتائیں ہم آپ کی رہنمائی کریں گے۔ پاکستان میں آن لائن بزنس کمانے کا طریقہ بتانے کا مقصد صرف اور صرف عوامی خدمت ہے۔ یہی جذبہ کارفرما ہے سب پاکستانیوں سے گزارش ہے کہ ہمارے شانہ بشانہ چلیں، نوجوانوں کے ذریعے اربوں ڈالر پاکستان آنا شروع ہوجائیں گے۔ امریکی تاجر اور امریکی کمپنی سے پاکستان میں بولی جانے والی کسی بھی زبان میں بات کرسکتے ہیں۔ انگلش اگر آتی ہے تو اس سے زیادہ فائدہ ہوگا، تعلیم اور عمر کی بھی کوئی حد نہیں ہے۔ ایف اے بھی کافی ہے۔ انہوں نے بتایا کہ امریکہ میں کاروبار کے لیے کسی ویزے کی ضرورت نہیں ہے۔ پاکستان بیٹھے آپ کی ساری ڈیلنگ ہوگی۔ امریکی کاروبار تک رسائی کا انتخاب اس لیے کیا کہ دنیا میں سب سے زیادہ چھوٹے کاروبار امریکہ میں ہوتے ہیں۔ مجھے خود بھی تجربہ ہے۔ پاکستانی نژاد امریکی سرمایہ کاری و کاروباری جدید طریقوں کے علاوہ سے پاکستانی نوجوانوں کو تربیت دینا چاہتے ہیں اور کوئی بھی مفاد وابستہ نہیں ہے۔

مزید : کامرس