ڈیجیٹل پاکستان: اوبر کا لاہور پریس کلب میں میڈیا ورکشاپ کا انعقاد

ڈیجیٹل پاکستان: اوبر کا لاہور پریس کلب میں میڈیا ورکشاپ کا انعقاد

  



لاہور(پ ر) لاہور پریس کلب میں اوبر نے صحافیوں کے لئے ایک روزہ ورکشاپ کا انعقاد کیا۔ یہ اقدام عالمی رائیڈ شیئرنگ سروس کے عزم کا حصہ ہے جس میں کمپنی کامیاب فری لانسرز، ملازمین، اور کاروباری افراد کو فروغ دینے کے لئے مارکیٹ میں قابل ڈیجیٹل مہارت کی تربیت فراہم کر تی ہے۔تیزی فروغ پاتی ڈیجیٹل دنیا کے ساتھ ہم آہنگی برقرار رکھنے کے لئے پوری دنیا میں تکنیکی رجحانات کی معلومات درکار ہیں۔ ورکشاپ میں ڈیجیٹل پاکستان کے منظر نامے کو تبدیل کرنے کے سلسلے میں ٹیکنالوجی کے کردار پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ٹریننگ سے خطاب کرتے ہوئے، -اوبر کے ہیڈ آف کمیونیکیشن - حیدر بلگرامی نے کہا، '' تیزی سے فروغ پاتی ڈیجیٹل تبدیلی کو سمجھنے کے لیے ، اب میڈیا کو ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیوں کے ساتھ عمل پیرا ہونے کی مہارت حاصل کرنا ایک ضرورت بن گئی ہے۔ جدت اور ترقی کی صلاحیتوں کو بڑھانے کے اقدامات، میڈیا کو ڈیجیٹل طور پر آراستہ کرنے کے لئے ضروری ہیں۔"اس موقع پر صدر لاہور پریس کلب - ارشد انصاری نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ“ہمیں امید ہے کہ اس ورکشاپ میں شرکاء کی ڈیجیٹل میڈیا صلاحیتوں میں بہتری آئے گی اور صحافت کے حل پر مبنی نقطہ نظر کی حوصلہ افزائی کی جائے گی۔

صحافی برادری کی جانب سے ہم ایک ایسے اقدام کے انعقاد پر اوبر پاکستان کا شکریہ ادا کرنا چاہتے ہیں جس سے میڈیا کو نئی مہارتیں سیکھنے اور ڈیجیٹل پاکستان کے لئے تعاون کرنے میں مدد ملے گی۔"کمیونیکیشن ٹیکنالوجیز کو تیزی سے تبدیل کرنے کا ایک جائزہ پیش کرتے ہوئے، سیشن میں میڈیا کو ڈیجیٹل دور میں ابھرتے ہوئے رجحانات کے بارے میں گہرائی سے سمجھنے کی ضرورت پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ صحیح تربیت کے ساتھ، صحافی ڈیجیٹل پاکستان کے لئے معاشرے کی تیاری کو بڑھا کر تکنیکی انقلاب میں اہم کردار ادا کرسکتے ہیں۔پرنٹ، الیکٹرانک اور ڈیجیٹل میڈیم سے بزنس اور آئی ٹی سمیت مختلف بیٹ پر رپورٹنگ کرنے والے صحافی ورکشاپ کا حصہ تھے۔ تربیت کا ہدف صحافیوں کو ڈیجیٹل مہارت سے آراستہ کرنا تھا جسے آمدنی کے پائیدار دھارے میں تبدیل کیا جاسکے۔ابھرتی ہوئی ٹیکنالوجیز نے معیشتوں اور کاروباروں میں خلل ڈال کر معاشی مسائل پر قابو پانے کے لئے دنیا کو نئی راہیں مہیا کیں۔ صحیح صلاحیتوں سے ایسی ملازمتیں پیدا ہوں گی جو غربت کے خاتمے کے ذریعہ نہ صرف معیشت کو تیزی سے ترقی میں مدد مل سکتی ہیں بلکہ ملک کے کاروباری ماحول کو بھی بہتر بناسکتی ہیں۔

مزید : کامرس