27عالمی کنونشز پر عملدر آمد جاری، مجبوری کے تحت کام، مزدوری کرناچوری اور جرم سے بہتر: رزاق داؤد

27عالمی کنونشز پر عملدر آمد جاری، مجبوری کے تحت کام، مزدوری کرناچوری اور جرم ...

  



برسلز(آن لائن)وزیر اعظم کے مشیر برائے تجارت و سرمایہ کاری عبدالرزاق داؤد نے کہا ہے کہ مسائل کے باوجود پاکستان 27 بین الاقوامی کنونشنز پر عملدرآمد کرنے کی بھر پور کوشش کر رہا ہے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے اپنے دو روزہ دورہ برسلز کے آخری روز یورپی پارلیمنٹ برسلز میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے کہا کہ جی ایس پی پلس کو لیکر یہاں ملاقاتوں میں سب کا رویہ مثبت تھا، لیکن ان سے بچوں کی مزدوری اور لیبر لاز پر عملدرآمد کے حوالے سے سوالات کیے گئے جس کے جواب میں انہوں نے حکومت پاکستان کا موقف اپنے سننے والوں تک پہنچایا۔رزاق داؤد نے کہا کہ میں نے یہاں لوگوں کو بتایا کہ حکومت پاکستان ملک میں چائلڈ لیبر کے خاتمے کیلئے جاری پروگرامز کے علاوہ یونیسیف سے ملکر ایک پروگرام شروع کرنا چاہ رہی ہے حکومت وسائل کی کمی کے باوجود اسے سنجیدگی سے لے رہی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہم یہ سمجھتے ہیں کہ سماجی ترقی اور اصلاح کا ہر پروگرام ہمارے اپنے مفاد میں ہے اسی لیے ملک میں اصلاحاتی ایجنڈا زور و شور سے جاری ہے۔مشیر تجارت نے کہا کہ اس کیساتھ ساتھ یہاں لوگوں کو یہ بھی بتایا کہ مجبوری کے تحت کام اور مزدوری کرنا چوری اور جرم کرنے سے بہتر ہے، کیا آج سے 5 دہائیاں قبل یورپ میں چائلڈ لیبر نہیں تھی؟ لیکن ہر آنیوالے سال میں یہ کم ہو رہی ہے۔عبدالرزاق داؤد نے کہا کہ جی ایس پی پلس سے یک طر فہ نہیں بلکہ دو طرفہ فائدہ ہوا ہے، اس سکیم کے ذریعے گزشتہ 5 سال کے دوران 50 فیصد اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔اپنے دورۂ ڈیووس کے متعلق انہوں نے بتایا کہ پاکستان میں سرمایہ کاری کا ساز گار ماحول بن رہا ہے اور سرمایہ کار اس طرف متوجہ ہورہے ہیں۔

رزاق داؤد

مزید : صفحہ آخر