اعتماد میں لئے بغیر اصلاحاتی بل منظور نہیں‘ تکریم کاکا خیل

  اعتماد میں لئے بغیر اصلاحاتی بل منظور نہیں‘ تکریم کاکا خیل

  



پشاور(سٹی رپورٹر)پرائیویٹ ایجوکیشن نیٹ ورک کے صوبائی جنرل سیکرٹری سید انس تکریم کاکاخیل نے واضح کیاہے کہ رات کی تاریکی اور پیراشوٹ سے اترے کوئی اصلاحاتی بل بغیر اعتماد میں لئے منظور نہیں ہوگا حکومت نجی اور سرکاری اداروں سے تعلیمی ماہرین کی ایک کمیٹی بنا کر انکی سفارشات پر اصلاحات ایجوکشن اسٹینڈنگ کمیٹی میں لائی جائیں اور ان ریکمنڈیشن کوایجوکیشن کمیٹی بحث مباحثہ کے بعد اپنی سفارشات کے ساتھ صوبائی اسمبلی کو بھیجے۔ اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہاکہ گزشتہ کئی سالوں سے تعلیم اور تعلیمی اداروں کے ساتھ اصلاحات کے نام پر سنگین مذاق ہورہا ہے جسکی وجہ سے گرتاہوا معیار تعلیم تو ٹھیک نہیں ہورہا البتہ گروہی مفادات کی سرپرستی روزبروز بڑھ رہی ہے ہمارا قومی المیہ ہے کہ ہر کوئی دوسرے کے کام کو شوق سے کرتا ہے اور اپنا کام نہیں کرنا چاہتا تمام اصلاحات ذاتی مفادات، مزید اختیارات لینے اور مزید آسامیاں اور پوزیشن بنانے کیلئے ہوتی ہیں، عوام کی بہتری، اداروں کی بہتری یا معیار تعلیم کی بہتری کیلئے نہیں ہوتے تعلیم میں بہتری اور قومی تقاضوں سے ہم آہنگ کرنا، اداروں کو مضبوط کرنا اور میرٹ کو پروان چڑھانا وقت کا تقاضا ہے جسکو نہ حکومت سنجیدگی سے لے رہی ہے اور نہ عوام اور سول سوسائٹی۔ انہوں نے کہاکہ پرائیویٹ ایجوکیشن نیٹ ورک ایسے تمام اصلاحات جو اسٹیک ہولڈر کو اعتماد میں لئے بغیر ہونگے اور جو تعلیم، تعلیمی اداروں یا عوام کے حق میں نہیں ہونگے اسکو مسترد کرے گی اس ضمن میں احتجاج بائیکاٹ اور عدالت جانے کا حق محفوظ رکھتے ہیں

مزید : پشاورصفحہ آخر