بنوں‘ جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمن شیر و شکر ہو گئے

بنوں‘ جرگہ کی کاوشوں سے دیرینہ دشمن شیر و شکر ہو گئے

  



بنوں (بیورورپورٹ)جرگہ کی کوششیں رنگ لے آئیں خون کے پیاسے ایک دوسرے سے بغلگیر ہوگئے،اکرم بیگ اور محب حاجی کے خاندانوں کے درمیان قتل مقاتلی کی دشمنی کا رازہ نامہ ہوگیا منڈواہ میں پانچ سال قبل کاشف الرحمن کو اکرم بیگ فیملی کے فرد نے قتل کیا تھا اور یہ دشمنی ختم کرنے کیلئے بنوں اور ضلع کرک کے مشران نے بہت کوششیں کیں لیکن کامیاب نہ ہوسکے آخر کار حاجی فاروق خان وزیربنوں اور امان اللہ خان نے دو سال کوششیں کیں اور فریقین کے مابین صلح کرانے میں کامیاب ہوگئے اس سلسلے میں پختون روایات کے مطابق ملزم فریق وحید کی جانب سے مقتول کاشف الرحمن کے خاندان کو مشران علاقہ اور علماء کرام کے ہمراہ ننوتے جرگہ کیا گیا ننوتے میں پانچ دنبے اور25لاکھ روپے نقد پیش کئے گئے اس موقع پر حاجی فاروق خان آف گریڑہ،،سابق صوبائی وزیر ملک قاسم خان،مفتی امداد اللہ،شیخ مولانا عبدالحمید،مولانا عبدالقادر اور ختم نبوت کے ضلعی امیر مفتی عظمت اللہ نے صلح کی اہمیت کے حوالے سے جرگہ سے خطاب کیا حاجی فاروق خان نے اپنے خطاب میں کہا کہ مقتول خاندان کو ملزم فریق کی جانب سے 25لاکھ روپے نقد،پانچ دنبے لائے گئے ہیں اور تین افراد قرآن پر صفائی دیں گے کہ کاشف الرحمن کو جان بوجھ کر یا کسی کے اشارے پر قتل نہیں کیا گیا ہے بلکہ یہ ایک حادثہ تھا اسی طرح مبینہ ملزم خاندان میں غمی وخوشی میں شرکت کے علاوہ پانچ سال تک گاؤں نہیں آئیں گے اس موقع پر مقتول فریق نے جرگہ کی خاطردنبے اور25لاکھ روپے نقد معاف کرتے ہوئے دشمنی ختم کرنے کا اعلان کیا اور بعد ازاں دونوں فریق ایک دوسرے سے بغلگیر ہوگئے اور آئندہ بھائیوں کی طرح وقت گزارنے کا عہد کیا۔

مزید : پشاورصفحہ آخر