بونیر سے اغوا کی گئی دو بچیاں تین سال گزرنے کے باوجود بازیاب نہ ہوسکی

    بونیر سے اغوا کی گئی دو بچیاں تین سال گزرنے کے باوجود بازیاب نہ ہوسکی

  



پشاور (سٹی رپورٹر)بونیر سے اغوا کی گئی دو بچیاں تین سال گزرنے کے باوجود بازیاب نہ ہوسکی پولیس حکام اور دیگر متعلقہ حکام کو در خواستیں دینے کے باوجود متاثرہ باپ کو انصاف نہ مل سکا بیٹیوں کی فریاد لیکر بونیر کا رہائشی رازق پشاور پریس کلب پہنچا اور بچیوں کی بازیابی اور خاندان کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا اور آئی جی خیبر پختونخوا سے انصاف کی اپیل کی ہے انہوں نے کہا کہ میری دو بیٹیوں جنکی عمریں 16اور 18سال ہے کو میرے قریبی رشتہ دار وں ملزم علی بہادر اور اشرف علی نے اغوا کر کے فروخت کر دیا اور مجھے بیوی بچوں سمیت قید کر لیا۔انہوں نے کہا کہ مذکورہ ملزمان کی قید سے فرار ہو کر ہم نے تھانہ میں رپورٹ درج کرنے کی کوشش کی مگر ملزمان با اثر ہونیکی وجہ سے ہماری رپورٹ درج نہ ہوسکی جبکہ میں اپنے خاندان کے تحفظ کیلئے کراچی شفٹ ہوا تاہم ملزمان نے کراچی میں بھی ہمیں چین سے جینے نہیں دیا اور میرے بیٹے کو وہاں سے اغوا کیا جو بعد ازاں صوابی سے بازیاب ہوا۔انہوں نے کہا کہ ملزمان جائیداد کیلئے مجھے اور میرے خاندان والوں کے پیچھے پڑے ہے اور ہمیں مارنے کی دھمکیاں دیتے ہے جبکہ میری دو بچیاں تین سال پہلے اغوا کر کے فروخت کی ہے جنکا تا حال کوئی پتہ نہیں ہے اور مختلف جگہوں پر اپنی فریاد لیکر گیا مگر کہی کوئی شنوائی نہیں ہوئی ۔انہوں نے وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا اور آئی جی خیبر پختونخوا سے مطالبہ کیا کہ میری بچیوں کو بازیاب کرایا جائے اور ہمیں تحفظ دینے کیساتھ ساتھ انصاف فراہم کیا جائے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر