ورکرز کنفیڈریشن کا شاہدرہ میں فیکٹری دھماکہ پر اظہار افسوس

ورکرز کنفیڈریشن کا شاہدرہ میں فیکٹری دھماکہ پر اظہار افسوس

  



لاہور(پ ر)آل پاکستان ورکرز کنفیڈریشن امامیہ کالونی شاہدرہ میں پرفیوم فیکٹری میں سلنڈرحادثہ پر گہرے رنج وغم کا اظہار کرتی ہے بزرگ مزدور رہنماء خورشیداحمد جنرل سیکرٹری، روبینہ جمیل صدر، اکبر علی خان، خوشی محمدکھوکھر، اْسامہ طارق، نیاز خان، چوہدری محمد انور نے کہا کہ ملک میں محنت کشوں کو کام پر محفوظ اور صحت مند حالات کار مہیا کرانے اور اْنہیں کام پر تحفظ کے لئے فیکٹری ایکٹ 1936؁ کی دفعات پر عمل درآمد کا فقدان ہے جس کی وجہ سے پاکستان کو اقوام متحدہ نے ٹرانسپورٹ انڈسٹری میں سب سے زیادہ حادثات سے لقمہ بننے والا ملک قرار دیا گیا ہے۔

بلوچستان میں کانوں میں کام کرنے والے کارکنوں کو دنیا میں سب سے زیادہ حادثات کا شکار ہونے والا ملک اپنی رپورٹ میں قرار دیا ہے اس لئے حکومت پنجاب میں کارکنوں کو فیکٹریوں اور کانوں، ٹرانسپورٹ، شعبہ بجلی میں تعینات ملازمین کو کام پر حادثات سے پیشہ وارانہ بیماریوں کو محفوظ کرانے کے لئے لیبر قوانین کا سختی سے آئی ایل او کنونشن 81 کے اْصولوں کے مطابق عمل درآمد کرایاجائے یہ مطالبات آج آل پاکستان ورکرزکنفیڈریشن(رجسٹرڈ) کے ایک ہنگامی اجلاس منعقدہ بختیار لیبرہال لاہو رمیں اجلاس میں ایک قرارداد کے ذریعے وزیراعظم پاکستان اور وزیراعلٰے پنجاب سے پْرزور مطالبہ کیاگیا کہ وہ کام پر المناک حادثات کے شکار کارکنوں کے خاندان کو کم ازکم مبلغ 20 لاکھ فی کس مدد کی جائے اس امداد کے لئے ورکرز ویلفیئر فنڈ سے اخراجات ممکن بنائے جائیں -

مزید : میٹروپولیٹن 4