ریلوے لاہور ڈویژن کا بحران حل نہ ہو سکا، ٹرینیں بند ہونے کا خدشہ

ریلوے لاہور ڈویژن کا بحران حل نہ ہو سکا، ٹرینیں بند ہونے کا خدشہ

  

لاہور(سٹاف رپورٹر) ریلوے لاہور ڈویژن میں ڈیزل کا بحران حل نہ ہوسکا جس کے باعث برانچ لائن پر چلنے والی ٹرینوں کی آمدورفت متاثر ہونے کا خدشہ ہے ۔گزشتہ روز بھی ریلوے کے پاس صرف 25ہزار لیٹر ڈیزل موجود تھا جو آج دوپہرتک زیر استعمال رہے گا۔جبکہ پی ایس اوکی جانب سے ریلوے کومزید بھجوایا گیا 90ہزار لیٹرڈیزل آج لاہور پہنچے گااگر یہ ڈیزل تاخیر سے پہنچاتو ٹرینوں کی آمدورفت روکنے کا خدشہ ہے ۔ ذرائع نے بتایا کہ ریلوے کے پاس سٹاک میں کم از کم 37دن کا ڈیزل ہونا چاہیے لیکن مالی بحران کے باعث ریلوے کے پاس ڈیزل کاسٹاک قواعد وضوابط کے مطابق نہیں رہتا ۔گزشتہ کئی عرصے سے ریلوے میںسات دن کا ڈیز ل سٹاک میں رکھنا معمول بن گیا ہے لیکن اب یہ بحران شدت اختیار کرگیا ہے ریلوے لاہورڈویژن کے پاس ایک دن کا ڈیز ل ہے اتوار کے روزصرف 25ہزار لیٹر ڈیزل سٹاک میں تھا جس کی مد د سے برانچ اور مین لائن پر چلنے والی ٹرینیں چلائی گئیںذرائع نے بتایا کہ پی ایس او کی جانب سے لاہور ڈویژن ریلوے کو 90ہزارلیٹر ڈیزل دیا گیا ہے جو آج بروز سوموار کو کراچی سے لاہور پہنچ جائے گا۔اگر کسی وجہ سے یہ ڈیزل مقررہ وقت پر لاہور نہ پہنچ پایا تو ریلو ے کے پاس جو 25ہزار لیٹر ڈیزل ہے وہ دوپہر تک چل پائے گا اوربعدازاں ڈیزل کی قلت پیدا ہوجائے گی اور ریلو ے انتظامیہ کو مجبورا برانچ لائن چلنے والی ٹرینوں کی آمدورفت کوعارضی طور پر روکنا پڑے گا۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -