انٹرنیٹ پر محبت کی تلاش کرتی لڑکی کو بالآخر پیار مل گیا، لیکن پہلی ملاقات کیلئے پہنچتے ساتھ ہی اس کے ساتھ ایسا کام ہوگیا کہ جان کر ہر لڑکی ان کاموں سے توبہ کرلے

انٹرنیٹ پر محبت کی تلاش کرتی لڑکی کو بالآخر پیار مل گیا، لیکن پہلی ملاقات ...
انٹرنیٹ پر محبت کی تلاش کرتی لڑکی کو بالآخر پیار مل گیا، لیکن پہلی ملاقات کیلئے پہنچتے ساتھ ہی اس کے ساتھ ایسا کام ہوگیا کہ جان کر ہر لڑکی ان کاموں سے توبہ کرلے

  

ماسکو (نیوز ڈیسک) آج کل کی نوجوان نسل انٹرنیٹ پر محبت کی تلاش میں ڈھیروں وقت برباد کرتی نظر آتی ہے۔ اگرچہ یہ کام لڑکوں کے لئے بھی کچھ کم پر خطر نہیں لیکن انٹرنیٹ پر محبت کی متلاشی لڑکیوں اور خواتین کے ساتھ کیا ہو سکتا ہے، اس کا اندازہ روش میں پیش آنے والے بھیانک واقعے سے کیا جا سکتا ہے۔

میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق انٹرنیٹ کے ذریعے محبت کی تلاش کرنے والی ایک روسی لڑکی کو ایک سوشل میڈیا ویب سائٹ پر پیار تو مل گیا مگر پہلی ہی ملاقات میں اجنبی ’دوست‘ نے اس کا سر تن سے جدا کردیا۔ ایکاترین برگ شہر سے تعلق رکھنے والی کرسٹینا میدے دیوا ایک دکان میں اسسٹنٹ کے طور پر کام کرتی تھی۔ روسی پولیس کا کہنا ہے کہ 22 سالہ کرسٹینا کے لاپتہ ہونے کے تین دن بعد اس کی سرکٹی لاش ملی۔

نوجوان پاکستانی لڑکی نے ایک ایسے میدان میں جھنڈے گاڑ دیئے جسے صرف مردوں کیلئے مخصوص سمجھا جاتا تھا ، کیا کیا؟ جان کر آپ کو بھی حیرت ہوگی

رپورٹ کے مطابق کرسٹینا تلیتسا شہر سے نئی زندگی اور محبت کی تلاش میں ایکا ترین برگ شہر میں آئی تھی۔ وہ اپنی ایک سہیلی کے ساتھ کرائے کے فلیٹ میں رہ رہی تھی اور 24 جولائی کو انٹرنیٹ پر ملنے والے ایک اجنبی کے ساتھ باہر گئی تھی۔

نوجوان لڑکی کے اندوہناک قتل نے سوشل میڈیا پر خواتین کو لاحق خطرات کی بحث ایک بار پھر چھیڑ دی ہے۔ روسی حکام کا کہنا ہے کہ انٹرنیٹ کے ذریعے نوعمر لڑکیوں اور خواتین کو نشانہ بنانے والے درندوں کا سراغ لگانے کے لئے ایک نیا نظام وضع کرنے پر غور کیا جارہا ہے تاکہ آئندہ ایسا بھیانک واقعہ پیش نہ آئے۔

مزید :

ڈیلی بائیٹس -