تخت لاہور کیلئے بھاگ دوڑ جاری رابطے ، ملاقاتیں

تخت لاہور کیلئے بھاگ دوڑ جاری رابطے ، ملاقاتیں

لاہور) سٹاف رپورٹر ، مانیٹرنگ ڈیسک ، نیوز ایجنسیاں)پنجاب میں حکومت سازی کیلئے مسلم لیگ ن اور تحریک انصاف سرگرم ہیں اور مطلو بہ نمبر حاصل کرنے کیلئے دونوں جماعتوں نے آزاد امیدواروں اور مسلم لیگ ق سے رابطے بھی تیز کردیے۔مسلم لیگ ن 127 نشستوں کیساتھ پہلے نمبر پر ہے جبکہ تحریک انصاف کا 123 نشستوں کیساتھ دوسرا نمبر ہے تاہم حکومت بنانے کیلئے 29 آزاد امیدواروں کی اہمیت بڑھ گئی ہے۔ جنوبی پنجاب کے چار آزاد ارکان کی پی ٹی آئی میں شمولیت کے بعد تحریک انصاف کی عددی حیثیت 127 تک پہنچ گئی اور یہ مسلم لیگ ن سے دو نشستیں پیچھے ہے تاہم پی ٹی آئی نے دعوی کیا ہے کہ کل تک مطلوبہ نمبر حاصل کرلیں گے۔نمبر گیم کی دوڑ میں تحریک انصاف کی جانب سے چوہدری سرور، جہانگیر ترین، علیم خان اور اسلم اقبال مصروف ہیں جبکہ 18 آزاد اراکین کی کل عمران خان سے ملاقات اور تحریک انصاف میں شمولیت کا بھی امکان ہے۔آج سابق وزیراعلی پنجاب اور رہنما ق لیگ پرویز الہٰی کی عمران خان سے ملاقات کا امکان ہے جبکہ پی ٹی آئی کے فواد چوہدری نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کی جماعت وفاق کیساتھ ساتھ پنجاب میں بھی حکومت بنائے گی۔ دوسری جانب مسلم لیگ ن پنجاب میں حکومت سازی کیلئے پیپلز پارٹی کے بعد مسلم لیگ ق سے بھی تعاون مانگ لیا اور اسی سلسلے میں رہنما ن لیگ و سابق اسپیکر قومی اسمبلی سردار ایاز صادق نے ق لیگ کے رہنما چوہدری پرویز الہٰی کو فون کیا اور پنجاب میں حکومت سازی کے لیے تعاون مانگاجبکہ چودھری شجاعت کی صدارت میں ہونیوالے مسلم لیگ ق کے اجلاس میں پنجاب میں حکومت سازی کیلئے مسلم لیگ ن سے تعاون نہ کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔مسلم لیگ ن کی سینئر قیادت سے 9 آزاد اراکین نے ملاقات کی اور پارٹی میں شمولیت کی یقین دہانی کرائی ہے ۔ووٹوں کے تناسب سے۔ذرائع کے مطابق تحریک انصاف مسلم لیگ ق کو مرکز اور پنجاب کی حکومتوں میں اہم نمائندگی دینے کیلئے تیار ہے جس کے تحت مرکز میں ق لیگ کو ایک وفاقی وزیر اور ایک وزیر مملکت کاعہدہ دیاجاسکتا ہے۔ اس کے علاوہ پنجاب میں بھی مسلم لیگ ق کو ایک وزیر اور ایک مشیر کا عہدہ دیا جاسکتا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے مسلم لیگ ق پنجاب میں بڑے منصب کیلئے کوشاں ہے۔ د و سری جانب رہنما پی ٹی آئی محمود الر شید کے مطابق 15 مزید آزاد ارکان اسمبلی کی تحریک انصاف میں شمولیت کا امکان ہے جس کے نتیجے میں پنجاب میں پی ٹی آئی کی حکومت یقینی ہے جبکہ پرویز الہٰی پی ٹی آئی کیساتھ حکومت میں شامل ہو نگے۔ مزید 6 آزاد ارکان کھلاڑی بن گئے،تحریک انصاف کی ، 134 نشستوں کیساتھ پوزیشن مضبوط ہو گئی۔تحریک انصاف کے سینئر رہنما جہانگیر ترین پنجاب میں حکومت سازی کیلئے تیزی سے کوششیں جاری رکھے ہوئے ہیں۔ پنجاب سے مزید 3 ارکان جہانگیر ترین اور رائے حسن نواز کے ہمراہ بنی گالہ پہنچے اور کپتان کے قافلے میں شمولیت کا اعلان کیا۔نئے شامل ہونیوالے ارکان میں فیصل آباد سے اجمل چیمہ اور ملک عمر فاروق جبکہ مظفرگڑھ سے عبدالحئی شامل ہیں۔ اس سے قبل پی پی 46 کے آزاد امیدوار پیر سید الحسن اور پی پی 7 کے کامیاب امید وار راجہ صغیر شامل ہیں مسلم لیگ(ق)نے مرکز اور پنجاب میں پاکستان تحریک انصاف(پی ٹی آئی)کی حمایت کا فیصلہ کرتے ہوئے پنجاب میں مسلم لیگ(ن)کا ساتھ دینے سے انکار کردیا۔میڈیا رپورٹس کے مطابق فیصلہ چوہدری شجا عت حسین کی سربراہی میں پارٹی کے مشاورتی اجلاس میں ہوا۔اجلاس کے دوران معاملے پر غور کیا گیا اور شرکا کی جانب سے کہا گیا ق لیگ پی ٹی آئی کی اتحادی ہے اور اس اتحاد کو مزید مضبوط کی جائے گا۔ق لیگ کے اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ مرکز اور پنجاب میں تحریک انصاف کا ساتھ دیا جائے گا۔ میڈیا رپورٹس کے مطابق اجلاس میں ن لیگ کے بارے میں کہا گیا کہ وہ ہمیشہ مفادات کیلئے رابطہ کرتے ہیں۔مسلم لیگ(ن)کی جانب سے سپیکر قومی اسمبلی اور پارٹی رہنما ایاز صادق نے مسلم لیگ ق کی قیادت سے رابطہ کیاتھا۔ ۔تر جما ن کے مطابق تینوں امیدواروں کی شمولیت کے بعد پی ٹی آئی پنجاب میں سیٹوں کے حوالے سے سب سے بڑی جماعت بن چکی ہے ۔ پی ٹی آئی پنجاب میں حکومت سازی کے عمل کا جلدآغازکریگی ۔اس سے قبل ن لیگ نے 9 آزاد ارکان کی حمایت حاصل کرنے کا دعویٰ کیا تھا جبکہ 21 آزاد اور ق لیگ کے 7 ارکان کے حوالے سے ابھی تک کسی کی بھی حمایت کا اعلان سامنے نہیںآیا۔

جوڑ توڑ

مزید : صفحہ اول