وزیر اعلٗی خیبرپختونخوا کیلئے عاطف خان ، اشتیاق ارمڑ ، شوکت یوسفزئی شارٹ لسٹ

وزیر اعلٗی خیبرپختونخوا کیلئے عاطف خان ، اشتیاق ارمڑ ، شوکت یوسفزئی شارٹ لسٹ

اسلام آباد(صباح نیوز)تحریک انصاف نے الیکشن 2018 ء میں واضح برتری کے بعد کابینہ کی تشکیل پر مشاورت شروع کر دی ہے۔اسی حوالے سے تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے فیصلہ کیا ہے کہ نیب زدہ منتخب امیدواروں کو کابینہ میں شامل نہیں کیا جائے گا۔ میڈیارپورٹس کے مطابق نیب انکوائری میں شامل پی ٹی آئی کے نو منتخب امیدوار کابینہ کا حصہ نہیں ہوں گے۔عمران خان نے ممبران کی نیب کیسز سے متعلق تفصیلات طلب کر لی ہیں۔کابینہ کی تشکیل میں تاخیر کی بھی اہم وجہ چھان بین ہے تا کہ کسی بھی نیب زدہ امیدوار کو کابینہ میں شامل نہ کیا جا سکے۔تفصیلات کے مطابق چیئرمین تحریک انصاف کی زیر صدارت بنی گالہ میں مشاورتی اجلاس میں حکومت سازی اور کابینہ ارکان کے ناموں پر غور کیا گیا۔عمران خان کی سربراہی میں ہونے والے اجلاس میں وزیر اعلیٰ خیبرپختونخوا کیلئے عاطف خان، اشتیاق ارمڑ، شوکت یوسفزئی کے نام شارٹ لسٹ کر لئے گئے۔ دوسری جانب مرکز میں حکومت سازی اور کابینہ ارکان کے ناموں پر بھی غور کیا گیا۔ اجلاس میں شرکت کیلئے پی ٹی آئی کراچی کے اہم رہنما بھی بنی گالہ پہنچے جن میں علی زیدی،فیصل واڈا،عمران اسماعیل بھی اجلاس میں شریک ہوئے۔اجلا س کے بعد ترجمان تحریک انصاف نعیم الحق کا کہنا ہے کہ ان کی پارٹی کے پاس پنجاب میں حکومت بنانے کے لیے مطلوبہ تعداد موجود ہے۔نعیم الحق نے کہا کہ صوبہ خیبرپختونخوا اور صوبہ پنجاب کے وزرائے اعلیٰ کے ناموں کیلئے مشاورت کی جارہی ہے اور جلد ہی ان کا اعلان کردیا جائے گا جس کے بعد اْمید کی جارہی ہے کہ قومی اسمبلی کے بعد صوبائی اسمبلیوں کے اجلاس بھی طلب کرلیے جائیں گے۔گورنر سندھ کے حوالے سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں نعیم الحق نے کہا کہ ’میں بتانا چاہتا ہوں کہ پی ٹی آئی کے کسی بھی اجلاس میں گورنر سندھ کے حوالے سے کوئی بات نہیں ہوئی ہے‘۔انہوں نے کہا کہ ’پی ٹی آئی چاروں صوبوں کے گورنرز کے حوالے سے مکمل مشاورت کے بعد فیصلہ کرے گی‘۔چوہدری پرویز الٰہی کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں پی ٹی آئی کے ترجمان کا کہنا تھا کہ انہیں مسلم لیگ (ق) کی قیات کے عمران خان یا کسی اور رہنما سے ملاقات کی معلومات نہیں ہیں لیکن جیسے ہی انہیں کچھ معلوم ہوگا تو میڈیا کو آگاہ کردیں گے۔نعیم الحق کا کہنا تھا کہ پنجاب کا وزیراعلیٰ تحریک انصاف سے ہوگا، انہوں نے واضح کیا کہ انتخابات میں شکست کھانے والے منفی سیاست کررہے ہیں۔انہوں نے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ کا نام لے کر کہا کہ ’مولانا فضل الرحمن بڑی پارٹیوں کی طرح ذمہ داری کا مظاہرہ کریں اور شکست تسلیم کریں۔

تحریک انصاف

مزید : صفحہ اول