بلڈ ٹیسٹ کے دوران سابق وزیر اعظم کے خون میں کلاٹس آئے ، دونوں بازوؤں میں شدید درد ڈاکٹروں کی پمز کے سی سی یو منتقل کرنے کی ہدایت ، نواز شریف ہسپتال منتقل

بلڈ ٹیسٹ کے دوران سابق وزیر اعظم کے خون میں کلاٹس آئے ، دونوں بازوؤں میں شدید ...

راولپنڈی (سٹاف رپورٹر، مانیٹرنگ ڈیسک )سابق وزیر اعظم نواز شریف کی اڈیالہ جیل میں طبیعت شدید خراب ہوگئی جس پر انہیں پمز ہسپتال منتقل کر دیا گیاسابق وزیراعظم نواز شر یف کو جیل سے ہسپتال منتقل کرنے کیلئے ایمبولینس میں لے جایا گیا۔ انہیں انتہائی سخت سیکیورٹی میں پمز منتقل کیا گیا جبکہ انکے معالج ڈاکٹر عدنان بھی ان کے ہمراہ تھے۔سابق وز یر اعظم نواز شریف کی گزشتہ صبح اڈیالہ جیل میں طبیعت بگڑ گئی تو پمزکے ایچ او ڈی ڈاکٹر نعیم ملک نے انہیں سی سی یو منتقل کرنے کی تجویز دی تھی۔ ڈاکٹروں کی جانب سے نوازشریف کا بلڈ ٹیسٹ کیا گیا تو ان کے خون میں کلاٹس کی نشاندہی ہوئی، جس کے باعث ان کے خون کی روانی متاثر ہوگئی اور دونوں بازوں میں شدید درد اٹھا جبکہ ای سی جی بھی غیرتسلی بخش آئی ۔ڈاکٹر نعیم ملک نے میاں نواز شریف کو سی سی یو منتقل کرنے کی تجویز دی تو جیل حکام نے نگراں حکومت پنجاب سے رابطہ کیا جس نے نواز شریف کو اسپتال منتقل کرنے کی اجازت دیدی جبکہ نواز شریف نے ہسپتال منتقل ہونے سے پہلے اپنے ذاتی معالج ڈاکٹر عدنان سے چیک اپ کیلئے کہا جس پر ڈاکٹر عدنان نے بھی نواز شریف کو سی سی یو منتقل کرنے سفارش کی ذرائع کے مطابق محکمہ داخلہ پنجاب نے سابق وزیر اعظم کو ڈاکٹروں کی رپورٹس کی روشنی میں پمز ہسپتال منتقل کرنے کی منظوری دی جہاں پمزشعبہ امراض قلب میں پہلے سے ہی سابق وزیر اعظم کے لئے انتظامات کر لیے گئے تھے ۔سابق وزیر اعظم کو اڈیالہ جیل سے سرکاری ایبمولینس کے ذریعے سخت سیکیورٹی میں پمز کے سی سی یو میں منتقل کیا گیا پمز ہسپتال کے کارڈیک یونٹ کا سب جیل قرار دینے کا نوٹیفکیشن جاری ، اڈیالہ جیل کا عملہ تعینات کر دیا گیا جو سابق وزیر اعظم کی دیکھ بھال سمیت ان سے ملاقات کرنیوالوں کا شیڈول اور طریقہ کار مرتب کرے گا ۔ دوسری طرف پمز ہسپتال بالخصوص شعبہ امراض قلب کی عمارت کی سکیورٹی کو انتہائی سخت کرتے ہوئے پولیس کی بھاری نفری تعینات کی گئی ہے جبکہ نواز شریف کو جس وارڈ میں رکھا گیا ہے اس کو دو سیکیورٹی حصار فراہم کیے گئے ہیں ۔ نواز شریف سے کسی کو فوری طور پر ملاقات اجازت نہیں دی گئی تاہم خاندان کے افراد اور مسلم لیگ (ن) کے رہنماؤں اور کارکنوں کی سابق وزیر اعظم سے ملاقاتوں سے متعلق باضابطہ طور پر ایک طریقہ کار اور شیڈول منتقل کیا گیا ہے ۔

مزید : صفحہ اول