خیبرپختونخوا: 783امیدوار مجموعی ووٹوں کا 10فیصد سے زائد لینے میں ناکام ،ضمانتیں ضبط

خیبرپختونخوا: 783امیدوار مجموعی ووٹوں کا 10فیصد سے زائد لینے میں ناکام ...

اسلام آباد (این این آئی)عام انتخابات 2018 میں خیبر پختونخوا اسمبلی کے 97 حلقوں میں حصہ لینے والے ایک ہزار 106 امیدواروں میں سے ناکام 783 کی ضمانتیں بھی ضبظ ہوگئیں۔الیکشن کمیشن آف پاکستان کی جانب سے انتخابات کے نتائج کے اعلان کے بعد واضح ہونے والی صورت حال کے مطابق کے پی اسمبلی کے لیے انتخابات میں حصہ لینے والے 783 امیدوار متعلقہ حلقوں میں مجموعی طور پر کاسٹ ووٹ کا 10 فیصد سے زائد حاصل کرنے میں ناکام رہے۔صوبائی اسمبلی کے ان 783 امیدوار وں کی جانب سے ضمانت کے طور پر جمع کیے گئے20 ہزار روپے قومی خزانے میں جمع ہوں گے۔ناکام امیدواروں کی ضمانتوں کی مد میں حاصل ہونے والی رقم سے قومی خزانے کو ایک کروڑ 56 لاکھ 60 ہزار روپے کا فائدہ ہوگا۔صوبائی اسمبلی کے لیے 10 فیصد سے کم ووٹ حاصل کرنے والے زیادہ امیدواروں کی تعداد پی کے۔84 ہنگو سے ہے جہاں 20 حلقے میں پوسٹ ہونے والے مجموعی ووٹوں کا 10 فیصد لینے میں ناکام رہے اور یوں ان کی ضمانتیں ضبط ہوئیں۔ضمانتیں ضبط کروانے والے امیدواروں میں پاکستان تحریک انصاف سمیت دیگر جماعتوں کے امیدواروں بھی شامل ہیں۔پی کے۔26 کوہستان سے پی ٹی آئی کی خاتون امیدوار سدرہ خالد صرف 201 ووٹ حاصل کر پائیں۔خیال رہے کہ صوبائی اسمبلی کے دو حلقوں پی کے۔78 اور پی کے۔99 میں امیدواروں کے انتقال کے باعث انتخابات ملتوی ہوگئے ہیں۔پی ٹی آئی نے کے پی میں سب سے زیادہ نشستیں حاصل کرلی ہیں جبکہ متحدہ مجلس عمل (ایم ایم اے) دوسرے نمبر پر ہے۔

ضمانتیں ضبط

مزید : صفحہ آخر