چلتی ہوئی بس سے اسکی چیخیں سن کر پتہ چلا کہ اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی جارہی ہے اور پھر ۔۔۔

چلتی ہوئی بس سے اسکی چیخیں سن کر پتہ چلا کہ اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی جارہی ہے ...
 چلتی ہوئی بس سے اسکی چیخیں سن کر پتہ چلا کہ اس کے ساتھ جنسی زیادتی کی جارہی ہے اور پھر ۔۔۔

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

ڈھاکہ (ڈیلی پاکستان آن لائن)بنگلہ دین میں فیکٹر ی میں کام کرنے والی ایک خاتون نے نامعلوم افراد کے ہاتھو ںجنسی زیادتی کی کوشش پر چلتی ہوئی بس سے چلانگ لگا دی اور پیچھے سے آنیوالی ٹریفک تکے آکر کچلے جانے کے باعث جاں بحق ہوگئی ۔

غیر ملکی نیوز ایجنسی کے مطابق شیولی نے جنسی زیادتی سے بچنے کے لئے چلتی ہوئی مسافر بس سے چھلانگ لگائی جس کو پیچھے سے آنیوالی ٹریفک نے کچل دیا جس کے باعث وہ موقع پر چل بسی ۔

یہ واقع مرزا پورمیں پیش آیا ۔یہ بات شیولی بیگم کے خاوند شر یف ماہی نے اس وقت بتائی جب وہ اپنی بیوی پر مجرمانہ جنسی حملے اور اس کے مارے جانے کی رپورٹ لکھوانے پولیس سٹیشن آیا ۔

شیولی بیگم کی عمر 28برس تھی ، عینی شاہدین کے مطابق انہوں نے شیولی کو چلتی ہوئی بس میں چیخیں مارتے ہوئے سنا جس کے بارے میں خیال کیا جا رہاہے کہ اس کے ساتھ زبردستی جنسی زیادتی کرنے کی کوشش کی جارہی تھی او ر پھر اس نے شائد زیادتی سے بچنے کے لئے بس سے چھلانک لگادی اور پیچھے سے آنیوالی ٹریفک کے نیچے آکر بری طرح کچلی گئی ۔

پولیس بس کاسراغ لگانے کی کوشش کررہی ہے جس سے شیولی بیگم نے چھلانگ لگائی جبکہ اس کے ساتھ کام کرنیوالے ملازمین کا کہناہے کہ وہ چلتی ہوئی بس سے گر کر حادثے کا شکار ہوئی ۔ پولیس کے مطابق تفتیش کے بعد ہی حتمی رائے قائم کی جا سکے گی ۔

جنسی زیادتی کے دوران بس سے چھلانگ لگا کر کچلی جانیوالی شیور لی بیگم

مزید : ڈیلی بائیٹس