سولجر بازر: ایس بی سی اے کی سیل عمارت میں تعمیراتی کام جاری

      سولجر بازر: ایس بی سی اے کی سیل عمارت میں تعمیراتی کام جاری

  

کراچی (رپورٹ /ندیم آرائیں)ایس بی سی اے کے دانت کھانے کے اور دکھانے اور،ایک جانب ایس بی سی اے جمشید ٹاؤن کے افسران نے گراؤنڈ پلس میزنائن پلس فور کو مکمل منہدم کرنے کی بجائے صرف میزنائن کا کچھ حصہ منہدم کیا اور غیر قانونی عمارت کو سیل کرکے نکل گئے،بعد میں بلڈر کے ساتھ ملی بھگت کرکے اسے غیر قانونی عمارت کے عقبی دروازے سے کام کرنے کی کھلی چھوٹ دے دی،تفصیلات کے مطابق پلاٹ نمبر 36 سولجر بازار نمبر ایک جمشید ٹاؤن پر سندھ بلڈنگ کنٹرول اتھارٹی کی اجازت کے بغیر غیر قانونی تعمیرات کی جارہی تھیں،حیرت کی بات یہ ہے کہ جب بلڈر نے گراؤنڈ پلس میزنائن پلس فور کی تعمیرات تقریبا مکمل کرلی تب جاکر ایس بی سی اے کے افسران کو ہوش آیا اور فوری طور پر کارروائی کرتے ہوئے عمارت کا کچھ حصہ منہدم کیا گیا اور عمارت پر سیل لگادی گئی،جس کے بعد بلڈر نے کچھ عرصہ کے لیے کام بند کردیا،پھر لاک ڈاؤن کے دوران ایس بی سی اے جمشید ٹاؤن کے افسران کی ملی بھگت سے بلڈر نے عمارت کے عقبی دروازے سے عمارت کے منہدم کیے ہوئے حصے کو چھوڑ کر باقی عمارت کا کام مکمل کرلیا اس وقت عمارت کا کام تکمیل کے آخری مراحل میں ہے،جبکہ ایس بی سی اے کے اسسٹنٹ ڈائریکٹر کا کہنا ہے کہ عمارت میں سیل ہونے کے بعد کسی قسم کا کام نہیں ہوا اور بلڈر ایس بی سی اے سے اجازت نامہ حاصل کرنے کی کوشش کررہا ہے اور بغیر اجازت نامے کے بلڈر کسی قسم کی تعمیرات نہیں کرسکتا،زرائع کا کہنا ہے کہ جمشید ٹاؤن کے ڈائریکٹرصفدر مگسی،ڈپٹی ڈائریکٹر علی اسد اور اسٹنٹ ڈائریکٹر سلیم نے اس جانب سے چشم پوشی اختیار کی ہوئی ہے,علاقہ مکینوں کا اس ضمن میں کہنا ہے کہ مین روڈ پر سیل کی ہوئی عمارت کی تعمیرات کو ایس بی سی اے کے افسران کی اجازت کے بغیر جاری رکھنا ناممکن ہے،علاقہ مکینوں کا مزید کہنا ہے کہ نئے ڈی جی ایس بی سی اے جمشید ٹاؤن میں غیر قانونی تعمیرات کا نوٹس لیتے ہوئے انہیں فوری منہدم کرنے کے احکامات جاری کریں

مزید :

صفحہ آخر -