صحت انصاف کارڈ کی طرز پر ذہین طلبا ء کیلئے پروگرا م لا رہے ہیں: ڈاکٹر عارف علوی 

    صحت انصاف کارڈ کی طرز پر ذہین طلبا ء کیلئے پروگرا م لا رہے ہیں: ڈاکٹر عارف ...

  

 صوابی(بیورورپورٹ) غلام اسحاق خان انسٹی ٹیوٹ آف انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹیکنالوجی کے 25 ویں کانووکیشن میں کل 476 طلباء کو ڈگریاں دی گئیں۔ڈاکٹر عارف علوی، صدر پاکستان جو جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے چانسلر ہیں نے تمام کامیاب امیدواروں کو آن لائن ڈگری دی۔ گذشتہ روز صدر ہاؤس اسلام آباد میں طلائی تمغہ جیتنے والوں اور پی ایچ ڈی طلباء کو ڈگریوں سے نوازاگیا۔ انسٹی ٹیوٹ میں منعقدہ ایک رنگا رنگ تقریب میں باقی تمام طلبہ کو ڈگریوں سے نوازا گیا اور تیمور سلیم خان جھگڑا، صوبائی وزیر خزانہ جو جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے ایک شاندار سابق طالب علم ہیں اور جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کے بانی اور سابق صدر پاکستان مرحوم غلام اسحاق کے پوتے ہیں اس موقع پر مہمان خصوصی تھے۔اس منفرد تقریب میں ملک بھر سے ماہر تعلیم، ماہرین، سیاست دان اور طلبا کے والدین نے شرکت کی۔ ایگزیکٹو ڈائریکٹر سوسائٹی برائے فروغ برائے انجینئرنگ سائنسز اینڈ ٹکنالوجی آف پاکستان (ایس او پی آر ایس ٹی)، شکیل درانی، سردار امین اللہ خان، انسٹی ٹیوٹ کے قائم مقام ریکٹر، پروفیسر ڈاکٹر وسیم احمد خان، پرو ریکٹر اکیڈمکس، بورڈ آف گورنرز کے ممبران اور ایگزیکٹو کمیٹی، ڈینز، فیکلٹی ممبران اور طلباء نے بھی تقریب کا انعقاد کیا۔اس موقع پر تیمور سلیم خان جھگڑا نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ مجھے اس پر فخر ہے کہ میں نے جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ میں بھی تعلیم حاصل کی۔ یہ ملک کی ایک ممتاز یونیورسٹی ہے۔ اعلیٰ تعلیم کی اس نشست سے میری محبت کی کوئی حد نہیں ہے۔انہوں نے طلباء کو نصیحت کرتے ہوئے کہا کہ جس فیلڈ کو آپ منتخب کرتے ہیں اس پر کبھی بھی توجہ مرکوز کرتے ہیں، کبھی بھی اصولوں پر سمجھوتہ نہیں کرتے اور معاشرے کی بہتری کے لئے نتیجہ پر مبنی اقدامات نہیں کرتے۔ انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت صوبے میں ہائیر ایجو کیشن کو پروموٹ کر رہی ہے۔ جب کہ صحت انصاف کارڈ کی طرز پرذہین طلباء کے لئے پروگرام لا رہا ہے۔ مشکل چیلنج ہے لیکن اس میں ضرورت کامیاب ہونگے۔ قائم مقام ریکٹر سردار امین اللہ خان نے جی آئی کے انسٹی ٹیوٹ کی تعلیمی و تحقیقی شعبوں میں کامیابیوں اور دنیا بھر کی کثیر القومی اور قومی کمپنیوں میں جی آئی کے گریجویٹس کے انوکھے مقام پر روشنی ڈالی۔پروفیسر وسیم نے کہا: ''وبائی امراض کی مسابقتی نئی صدی میں بقا کا راز، نئے انداز کے ساتھ ترقی اور ترقی کے لئے علم کو حاصل کرنا، پیدا کرنا، جمع کرنا، بانٹنا، اور استعمال کرنا ہے۔''کامیاب بی ایس گریجویٹس میں کمپیوٹر انجینئرنگ، کمپیوٹر سائنس 38، الیکٹریکل انجینئرنگ (الیکٹرانکس) 59، الیکٹریکل انجینئرنگ (پاور) 35، انجینئرنگ سائنسز 21، کیمیکل انجینئرنگ اینڈ میٹریلز انجینئرنگ 46، میکینیکل انجینئرنگ 94، اور مینجمنٹ کی فیکلٹی میں سے 49 تھے۔ سائنسز 20. انجینئرنگ کے مختلف شعبہ جات میں ایم ایس کرنے والے پچانوے طلباء کو بھی کانووکیشن میں ڈگریوں سے نوازا گیا تھا۔ڈاکٹریٹ کی ڈگریاں مدیحہ طاہر، عظمہ، عبد اللہ خان، سعد اللہ خان، عارف اللہ، عبد الکبیر، شاہد عالم، رحمت اللہ اور احترام علی کو دی گئیں۔فیکلٹی پر مبنی گولڈ میڈلز عثمان فاروق، محمد ریاض الحق، محمد عثمان عمر، منہیل جمشید، محمد شہریار، حوزیفا کامران، دانیال حکیم جوکھیو، شیخ عبد المجید، عفیفہ دلاویز چیمہ، آفاق حسین اور عبد الرحمن انور کو دیئے گئے۔تمام انڈرگریجویٹ پروگراموں میں عمدہ کارکردگی کے لئے قائد اعظم گولڈ میڈل منیہال طارق نے جیتا اور تمام انڈرگریجویٹ پروگراموں میں بہترین تعلیمی کارکردگی کے لئے غلام اسحاق خان گولڈ میڈل شیخ عبد المجید کو ملا۔

مزید :

صفحہ اول -