اقوام متحدہ نے وسطی ایشیا ء کو امن، اعتماد اور تعاون کا خطہ قرار دیدیا، قرار دا د منظور، اقدام مثبت اور بروقت، مکمل حمایت کرتے ہیں: پاکستان

اقوام متحدہ نے وسطی ایشیا ء کو امن، اعتماد اور تعاون کا خطہ قرار دیدیا، قرار ...

  

      نیویارک (این این آئی)اقوام متحدہ نے وسطی ایشیا کو امن،اعتماد اور تعاون کا خطہ قرار دیدیتے ہوئے جنرل اسمبلی نے اس ضمن میں قراردادکی منظوری دیدی، جبکہ پاکستان نے اسے ایک بروقت اور مثبت اقدام قرار دیا ہے۔ اقوام متحدہ کی 193رکنی جنرل اسمبلی نے اس بات کی سفارش کی کہ خطے کی تمام ریاستیں،دیگر تمام ممالک وسطی ایشیا میں امن کو برقر ا ر رکھنے کیلئے تعاون کریں، اقوام متحدہ کے چارٹر کی سختی سے پابندی کرتے ہوئے خطے کی تمام ریاستوں کی قومی یکجہتی، خودمختاری، سیاسی آزادی و علاقائی سالمیت کا احترام کریں۔ تر کما نستان کی سفیر اخو سلطان عطائیوا نے کرغزستان،تاجکستان اور ازبکستان کی طرف سے قرارداد متعارف کراتے ہوئے کہا وقت آگیا ہے کہ ان اصولوں اور اقدار کو واضح طور پر بیان کیا جائے جو وسطی ایشیائی ممالک کے جائز مفادات کی بنیاد پر امن و سلامتی، خطے میں پائیدار ترقی، تعاون و ثقافتی تعلقات کے فروغ میں معاون ہوں۔ وسطی ایشیا کے ممالک تعاون و ترقی کی بے پناہ صلاحیت کے حامل ہیں، اس خطے کا نہ صرف مشترکہ روحانی، ثقافتی اور تاریخی ورثہ ہے بلکہ ان کے آپس میں ایک ددسرے کیساتھ نقل و حمل اور مواصلاتی نیٹ ورکس بھی ہیں جو ایک دوسرے کی تکمیل کرتے ہیں۔ اقوام متحدہ میں پاکستان کے سفیر منیر اکرم نے قرارداد کی مکمل حمایت کا اظہار کرتے ہوئے اسے بروقت اقدام قرار دیااور کہا پاکستان اس بروقت قرارداد اور اس کے مقاصد کی مکمل حمایت کرتا ہے جس کا مقصد بین الاقوامی امن اور سلامتی کو مضبوط بنانا، اقوام متحدہ کے چارٹر اور اصولوں کو فروغ دینا، کثیر الجہتی کا فروغ، باہمی افہام و تفہیم اور تعاون کو بڑھانا ہے جو وسطی ایشیا اور دنیا بھر میں اقتصادی ترقی، علاقائی امن،خوشحالی اور روابط کے فروغ کیلئے انتہائی ضروری ہے۔ انہوں نے کہا پاکستان اپنے وسطی ایشیائی ہمسایہ ممالک کیساتھ تجارت، سرمایہ کاری، ٹرانسپورٹ، توانائی اور دیگر شعبوں میں رابطے اور تعاون کو فروغ دینے کیلئے پرعزم ہے۔ قوموں کے در میا ن اور اندرون ملک تنازعات پھیل رہے ہیں، نفرت، اسلامو فوبیا، یہود مخالف، فاشزم کے نظریات دوبارہ ابھرے ہیں اور ایک نئی اور غیر مستحکم کرنیوالی عالمی ہتھیاروں کی دوڑ جا ر ی ہے، اس مشکل عالمی ماحول میں تنازعات کے پرامن حل،بین الاقوامی تعاون کو فعال طور پر فروغ دینے اور ترقی اور موسمیاتی تبدیلی کے عالمی چیلنجز پر قابو پانے کیلئے اقوام متحدہ کے چارٹر کے اصولوں کے احترام کو بحال کرنا ضروری ہے۔ وسطی ایشیا مشرق کو مغرب اور شمال کو جنوب سے جوڑتا ہے، اس خطے میں امن و استحکام کو برقرار رکھنا تعاون اور تجارت کے فروغ کیلئے ناگزیر ہے۔خطے میں پائیدار امن کیلئے افغانستان میں پائیدار امن اور سلامتی کو یقینی بنانا ضروری ہے اور افغان حکومت کیساتھ اس کے تمام6قریبی ہمسایہ ممالک کی طرف سے مسلسل روابط قائم کیے جائیں۔

اقوام متحدہ قرارداد

مزید :

صفحہ اول -