رجسٹری وانتقال فیس جمع کروانے والے شہریوں سے بینک عملہ کی بد کلامی معمول :بہانے بنا کر ٹرخانے لگے

رجسٹری وانتقال فیس جمع کروانے والے شہریوں سے بینک عملہ کی بد کلامی معمول ...

لاہور(اپنے سٹاف رپورٹر سے ) مکانات، دکانیں اور اراضی کی خرید و فروخت کرنے والے شہری رجسٹری و انتقال فیس جمع کروانے کیلئے بینکوں کے رحم و کرم پر چھوڑ دیئے گئے۔ قومی خزانے میں رقوم جمع کروانے والے بینکوں کے چکر کاٹ کر اور متعلقہ سٹاف کی بدکلامی سے تنگ آگئے۔ ”سب رجسٹرار سے تصدیق کرواو¿“ کا بہانہ بنا کر بینک والوں نے شہریوں کو فٹ بال بنا دیا۔ تحصیل ماڈل ٹاو¿ن کے نشتر ٹاو¿ن کی رجسٹریشن برانچ میں آنے والے شہریوں نے روز نامہ ”پاکستان“ سے گفتگو کرتے ہوئے الزام عائد کیا ہے کہ بورڈ آف ریونیو کی جانب سے بینکوں میں فیس جمع کروانے کی پریکٹس شروع کروانے سے ہماری زندگی کو عذاب میں مبتلا کر دیا ہے۔ بینکوں میں ریونیو جمع کرنے کی بجائے مختلف حیلے بہانوں سے اعتراضات لگائے جا رہے ہیں اور شہریوں سے بدتمیزی کرنا بھی بینک انتظامیہ نے معمول بنا رکھا ہے۔ ہم بروقت اور جلد از جلد قومی خزانے میں ریونیو جمع کروانا چاہتے ہیں۔ بینک سٹاف ہمیں بھگانے اور ٹرخانے میں مصروف ہیں۔ شہری محمد سجاد شاہ، عرفان علی، محمد عامر اور محمد شریف سمیت دیگر کا کہنا ہے پہلے چالان فارم حاصل کرکے جب بینکوں میں جاتے ہیں تو اعتراضات لگائے جاتے ہیں اور کہا جاتا ہے کہ ڈی ڈی او رجسٹریشن کی مہر لگا کر لائیں جب یہ اعتراض دور کیا جاتا ہے تو اعتراض آتا ہے کہ سائن کروا کر لاو¿ حالانکہ تحصیل سٹی اور کینٹ کے کسی بھی بینک میں یہ پریکٹس نہیں کروائی جا رہی۔ صرف تحصیل ماڈل ٹاو¿ن میں صرف کام شروع ہو چکا ہے۔شہریوں نے سینئر ممبر بورڈ آف ریونیو اور چیف سیکرٹری پنجاب سے اپیل کی ہے کہ شہریوں کو اس ضمن میں سہولیات مہیا کریں۔ بینکوں میں ریونیو جمع کروانے کیلئے کوئی آسان پریکٹس کی جائے بینکوں کے باہر کھڑے کئی بزرگ شہری اور نوجوان شدید دھوپ اور لمبی لائن میں کھڑے ہو کر شدید کرب میں مبتلا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بینکوں میں پیسے جمع کروانے کیلئے جانے والے شہریوں سے ہونے والی بدسلوکی کا بھی نوٹس لیا جائے۔

مزید : میٹروپولیٹن 1