بلوچستان پاکستان کادل ہے اور ہمیشہ رہے گا،شاہد رشید

بلوچستان پاکستان کادل ہے اور ہمیشہ رہے گا،شاہد رشید

  

لاہور(لیڈی رپورٹر) 29جون 1947ء کے ریفرنڈم میں بلوچستان کے غیور عوام اور سرداروں نے قائداعظمؒ کی آواز پر لبیک کہتے ہوئے انگریز ہندو گٹھ جوڑ اور دباؤ کے باوجود پاکستان کے ساتھ الحاق کا تاریخی فیصلہ کیا۔ محمد خان جوگیزئی‘ میر جعفر خاں جمالی‘ قاضی محمد عیسیٰ،سردار غلام محمد خاں ترین‘ عبدالغفور درانی‘حاجی جہانگیر خاں ودیگر مشاہیر کی کاوشوں سے آج بلوچستان خداداد پاکستان کا جزولاینفک ہے۔ بلوچستان پاکستان کا دل ہے اور تاقیامت پاکستان کا حصہ رہے گا۔

ان خیالات کااظہار سیکرٹری نظریہئ پاکستان ٹرسٹ شاہد رشید نے 29جون 1947ء کو بلوچستان میں ہونیوالے تاریخی ریفرنڈم کے حوالے سے نئی نسل کو آگاہ کرنے کیلئے منعقدہ خصوصی آن لائن لیکچر کے دوران کیا۔شاہد رشید نے کہا کہ انگریز سامراج اور ہندو بنیا پاکستان کا مخالف تھا اور ان کی خواہش تھی کی بلوچستان پاکستان میں شامل نہ ہو لیکن بلوچستان کے سرداروں اور عوام نے پاکستان کے حق میں فیصلہ دیا۔ بلوچستان میں ریفرنڈم کی تاریخ 29 جون مقرر ہوئی تھی لیکن اس سے قبل ہی بعض ایسی مشکلات پیدا ہو چکی تھیں جن کی وجہ سے پاکستان کے حق میں فیصلہ ہونا آسان نظر نہیں آتا تھا۔ مسلم لیگی زعماء‘ قبائلی سردار اور سرفروش حالات کا رخ موڑنے کیلئے سر دھڑ کی بازی لگائے ہوئے تھے۔ دوسری جانب کانگرس بھی سازشوں میں مصروف تھی جبکہ انگریز بھی مسلمانوں کی یکجہتی کو ختم کرنے کے منصوبے بنا رہے تھے۔ قائداعظمؒ نے 25جون 1947ء کو بیان جاری کیا”میں ہر مسلمان سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ ہندوستان کی دستور ساز اسمبلی کی بجائے پاکستان کی دستور ساز اسمبلی میں شامل ہونے کے حق میں ووٹ دیں“۔اس بیان کے بعد نواب محمد خان جوگیزئی اور میر جعفر خان جمالی کا یہ مشترکہ بیان اخبارات میں شائع ہوا کہ ”بلوچستان کے سرداروں نے کامل غور و خوض کے بعد یہ فیصلہ کیا ہے کہ بلوچستان کے لوگوں کی آزادی کا بہترین تحفظ صرف پاکستان میں شامل ہونے کی صورت میں ممکن ہے“۔ بلوچستان میں پاکستان کیلئے اور بھی زیادہ انہماک کے ساتھ کام شروع ہوچکا تھا۔ راتوں کی نیند اور دن کا آرام پاکستان پر نچھاور کیا جارہا تھا۔ بلوچستان کے سردار کانگریس کی عظیم پیش کشوں کو پائے حقارت سے ٹھکرا رہے تھے۔ نتیجتاً تمام سردار پاکستان کے حق میں ووٹ دینے کا وعدہ کرچکے تھے۔ چنانچہ ایک تقریب میں جیفرے پرائر نے لارڈ ماؤنٹ بیٹن کا اعلان پڑھنا شروع کیا۔ وہ ابھی یہ اعلان ختم نہ کر پائے تھے کہ نواب جوگیزئی بڑے اعتماد سے اٹھے اور ان سے مخاطب ہوئے: ”ہم یہ بیان پہلے پڑھ چکے ہیں۔ ہمیں فیصلہ کرنے کے لیے مزید وقت نہیں چاہیے کیونکہ شاہی جرگے کے سردار پاکستان کی حمایت میں فیصلہ کرچکے ہیں۔ ہم اعلان کرتے ہیں کہ ہمارا نمائندہ پاکستان دستور ساز اسمبلی میں بیٹھے گا“۔اس اعلان کے بعد فضا پاکستان زندہ باد کے نعروں سے گونج اٹھی۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -