تو قاعدہ‘ تو سلیقہ‘ تو ضابطہ‘ تو اصول!

تو قاعدہ‘ تو سلیقہ‘ تو ضابطہ‘ تو اصول!

علامہ ۔۔۔

جناب رفیق پسروری

وہ ایک رات کہ جب اس زمین پہ زیر فلک

سجی ہوئی تھی خدا اور رسولؐ کی محفل

ہزاروں لوگ ہمہ تن خموش بیٹھے تھے

سنا رہا تھا قرآں اک بندۂ کامل

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

کہ یک بیک اک برق قتال کوند گئی

نہ مشعلیں نہ ستارے رہے نہ کوئی چراغ

فضا نے کالی رِدا اوڑھ لی اندھیرے کی

کہ دور تک نہیں ملتا تھا روشنی کا سراغ

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

چہار سمت ہوا شورِ الاماں برپا

سیاہ رات کی چادر پہ خون گرنے لگا

لباس چاند ستاروں کے تار تار ہوئے

تمام شہر قیامت کا روپ بھرنے لگا

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

وہ ایک لمحہ کہ جب جور وجبر کے ہاتھوں

زمیں پہ خوں اچھالا گیا شہیدوں کا

ستم تو یہ ہے کہ مقابل کھڑے ہوئے تھے وہ

کہ جن کے ساتھ تعلق دیں کے رشتوں کا

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

محبتوں کا پیمبر اخوتوں کا امیں

زمین پاک پہ لیٹا تھا خون میں غلطاں

افق سے تا بہ افق چھا گیا تھا سناٹا

سوال کرتے تھے قلب ونظر چلے ہو کہاں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

رہے گا نام درخشاں ترا قیامت تک

میرے شہید شجاعت کی داستانوں میں

بہا ہے تیرا لہو اس زمیں پہ لیکن

صلہ خدا سے تو پائے گا آسمانوں میں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تجھے ہوائے حادث کا کوئی خوف نہ تھا

تو اِک چٹان کی صورت کبھی نہ ہلتا تھا

تو عالی ظرف وسیع القلب کمال کا تھا

کہ دشمنوں کو خندہ لبی سے ملتا تھا

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

ہمیشہ ظلمت شب پر تو مسکراتا رہا

تو روشنی کا سمندر تھا۔ اے میرے غازی

فسردہ کر نہ سکی عمر بھر کبھی تجھ کو

مجاوروں کی فقیہوں کی شعبدہ بازی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو تابناک ستارہ تھا ظلمت شب میں

غروب تو ہو گیا ہے مگر بجھا تو نہیں

تو جس کی موت نے بخشا ہے زندگی کو دوام

زمیں کی گود میں لیٹا ہے پر مرا تو نہیں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو بحر فہم وفراست تو منبع حکمت

تو موشگاف محقق‘ تو فلسفی تو فہیم

تو مصلح تو معلم‘ تو معتدل تو معین

تو مستند‘ تو مصدق تو معتمد تو عدیم

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو احترام تو عزت‘ تو آبرو تو شرف

تو التفات‘ تو بخشش تو مرحمت تو عطاء

تو محتسب تو موافق تو مستحق تو عزیز

تو اجتناب تو غیرت تو شانِ شرم وحیا

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو خاکسار‘ تو عاجز‘ تو مفکر‘ تو حلیم

تو پائیدار تو قائم تو مستقل تو متین

تو سر بلند تو اعلیٰ تو مستجاب وقبول

تو آشکار تو روشن تو منکشف تو مبین

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو درد تو خدا ترس‘ تو رحمدل‘ غمخوار

تو غمگسار تو ساتھی‘ تو ہم نشین تو رفیق

تو ارتباط ومحبت‘ تو دوستی تو ملاپ

تو متصل تو معاون تو مہرباں تو شفیق

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو قاعدہ تو سلیقہ‘ تو ضابطہ تو اصول

تو جد وجہد تو کوشش تو جستجو تو سراغ

تو علم ودانش وحکمت تو مصلحت تو تمیز

تو نکتہ داں تو اجالا تو روشنی تو چراغ

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو مستعد تو مسلط‘ تو منطبق تو محیط

تو مہتمم تو محافظ تو پاسباں تو ولی

تو روبرو تو مقابل تو سورما تو دلیر

تو جانثار تو غالب تو شیر دل تو قوی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو سانحہ‘ تو وقوعہ‘ تو حادثہ‘ تو بیاں

تو اضطراب‘ تو صدمہ‘ تو ذکر آہ وفغاں

حدیث ظلم وستم‘ وارداتِ ضرب وزیاں

تو غلغلہ تو دھائی کہ تو کیاں تو کیاں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

نشاط وصل بھی کیفِ ملالِ ہجراں بھی

صباحت روئے خنداں بھی چشم گریاں بھی

ہو بدوش شب تار‘ صبح تاباں بھی

خزاں گزیدہ چمن‘ فصل گل بد اماں بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو راز قلبِ دریدہ‘ نگاہ محرم بھی

زبانِ دردِ محبت‘ شفیق وہمدم بھی

رفیقِ حالِ پریشاں‘ شریک ماتم بھی

طبیب خاص بھی زخم کہن بھی مرہم بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو موج تند بھی دھارا بھی جوش دریا بھی

خرام آب رواں‘ پر سکون کنارا بھی

گھٹائے ابر بھی ساون بھی باد وبرکھا بھی

دھانِ چشمۂ شیریں بھی اور پیاسا بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو بے نظیر بھی بے مثل بھی یگانہ بھی

تو ایک دور بھی ایک عہد بھی زمانہ بھی

تو قومیت بھی قبیلہ بھی اور گھرانہ بھی

پناہ گاہ بھی مسکن بھی آشیانہ بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو داستان بھی تاریخ بھی حوالہ بھی

حدیث درد بھی اک خونچکاں فسانہ بھی

شب سیاہ کا اک جاں فگار لمحہ بھی

غم فراق کی کلفت‘ الم کا نوحہ بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو موشگاف محقق‘ مہا مدبر بھی

قرین فہم مبلغ‘ اجل مفکر بھی

عروج فن خطابت‘ حسین مقرر بھی

سحر بیان بھی شریف زباں‘ مؤثر بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

طلسمِ ہوش ربا بھی مقامِ حیرت بھی

جمالِ صورت زیبا‘ جلال سیرت بھی

سکوت بحر بھی طوفان کی علالت بھی

تو جام تلخ بھی لذت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

امام العصر‘ نقیب کتاب وسنت بھی

امیر الامن‘ شہ منصب فضیلت بھی

ثبوتِ عظمتِ اسلاف کی روایت بھی

قرون اولیٰ کی تصویر‘ فخر ملت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

بہارِ حسن اطاعت‘ گل عقیدت بھی

غریقِ رحمتِ حق‘ محرم نبوت بھی

سرورِ دنیا ودین بھی سکون جنت بھی

خیالِ خوفِ خدا بھی غمِ قیامت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو فکر قوم پریشاں‘ دعائے وحدت بھی

جبینِ شوق بھی سجدہ بھی اور عبادت بھی

تو سوز قلب بھی‘ چشم رواں بھی‘ رقت بھی

تو انہماک بھی دست طلب بھی‘ منت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو بحر فہم وفراست‘ عمل کی وسعت بھی

تو اعتراف ذہانت‘ یقین حکمت بھی

منارِ غور وفکر زینۂ بصیرت بھی

زباں کا لوچ بھی زورِ بیاں بھی‘ ندرت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو اعتراض بھی تنقید بھی شکایت بھی

تو اعتراف بھی تصدیق بھی شہادت بھی

مکالمہ ومقولہ‘ دلیل وحجت بھی

تو انکشاف بھی تشریح بھی وضاحت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو انتباہ بھی تادیب بھی نصیحت بھی

تو سرزنش بھی ملامت بھی اور مذمت بھی

تو تربیت بھی آرائش بھی زیب وزینت بھی

تو التفات بھی‘ بخشش بھی اور عنایت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو رہنمائی بھی‘ منزل بھی اور مسافت بھی

وفودِ شوق‘ حصول سکوں کی حسرت بھی

تو زادِ راہ سفر بھی سفر کی کلفت بھی

طمانیت بھی‘ توکل بھی‘ استقامت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو جبلِ عزم وشجاعت‘ حصار ہمت بھی

جنون جہد مسلسل‘ ستون جرأت بھی

تو فرط جوش وحمیت بھی زور غیرت بھی

خمار جذبہ ایمان‘ خلوص نیت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

طلوع نور سحر‘ خوشبوؤں کی جنت بھی

جمال روئے گلِ تر بھی اور ملامت بھی

نگاہ شوق بھی نظارہ بھی بصارت بھی

گہر شناس بھی گوہر بھی قدر وقیمت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو باغبان بھی گلشن بھی پھول بھی رُت بھی

نسیم صبح بہاراں بھی موج نکہت بھی

تو رنگ وروپ بھی سج دھج بھی شان وشوکت بھی

شگفتگی بھی لطافت بھی اور طراوت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو احشتام بھی سطوت بھی جاہ وحشمت بھی

تو دبدبہ بھی شکوہ وجلال وہیبت بھی

تو تہلکہ بھی تزلزل بھی خوف ودہشت بھی

تو دشمنوں کے لیے قہر بھی قیامت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو مستغیث بھی قاضی بھی اور عدالت بھی

تو فیصلہ بھی تو فتویٰ بھی اور شہادت بھی

معاملت بھی نظامت بھی اور شہادت بھی

تو نکتہ دان بھی نکتہ بیں‘ علم وحکمت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو قاعدہ بھی سلیقہ بھی حسن عادت بھی

تو حیثیت بھی حقیقت بھی جامعیت بھی

تو مرتبہ بھی بزرگی بھی قد وقامت بھی

تو احترام بھی عزت بھی آدمیت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو انحراف بھی بلوہ بھی اور بغاوت بھی

تو دسترس بھی رسائی بھی اور قدرت بھی

قرینۂ لب‘ اظہار بھی جسارت بھی

حریف شرک وکفر بھی عدوِ بدعت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو آنسوؤں کی جلن سوز دل کی حدت بھی

ہجوم درد والم‘ سیل غم کی شدت بھی

اسیر حلقۂ زنجیر وبر بریت بھی

صلیب وقت پہ لٹکی ہوئی صداقت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

دعائے طلب شہادت بھی اور شہادت بھی

شفقت کی تیزئی سرخی‘ لہو کی رنگت بھی

حدیثِ عہد وفا‘ داستانِ جرأت بھی

تو لوحِ وقت پہ اِک خون کی عبارت بھی

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

قرآن فہم مبلغ بھی اِک مفکر بھی

غریق رحمت حق مقتدی امام بھی تو

تو اوج فن خطابت کا آخری معیار

شب سیاہ میں قندیل فیض عام بھی تو

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تو جا چکا ہے شہادت کے اوڑھ کر چادر

وفا پرست صلیبیں اٹھائے پھرتے ہیں

نہ جانے کونسے ارماں لہو لہو لے کر

تیرا پیام لبوں پر سجائے پھرتے ہیں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

عجب نہیں کہ فضاؤں کا حبس مٹ جائے

اٹھو کہ تیز ہواؤں میں ہم بکھر جائیں

فسوں گزیدہ ہے ماحول چار سو رقصاں

سراب وقت سے اترا کہ ہم گزر جائیں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

تمہیں بھی گردش دوراں کا ساتھ دینا ہے

اٹھاؤ رخت سفر میر کارواں کی طرح

تمہارے قدموں کو چومے گا خود بخود ساحل

پتھر کے آگے بڑھو سیل بیکراں کی طرح

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

ہمیں کو تیشۂ توحید ہاتھ میں لے کر

ہمیں کو کفر کے اصنام توڑنے ہوں گے

ہمیں کو عظمت انسان سنوارنی ہو گی

ہمیں کو ٹوٹے ہوئے دل بھی جوڑنے ہوں گے

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

ہمیں قسم ہے خدائے بزرگ وبرتر کی

تمہارے درد ہمیں آج بھی پیارے ہیں

وہ دل کبھی جو تیری زندگی کے مرکز تھے

مرے شہید وہ دل آج بھی تمہارے ہیں

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

اگرچہ منزل مقصود پر خطر تھی مگر

تو روز وشب کی مسافت سے چور نہ ہو سکا

ہزار جبر مسلسل کے باوجود بھی تو

دلوں کے گہرے تعلق سے دور نہ ہو سکا

۔۔۔۔۔۔bnb۔۔۔۔۔۔

مزید : ایڈیشن 1