بونیر، سی ڈی ایل ڈی پروگرام کیلئے تقرریوں پر اراکن کونسل سراپا احتجاج

بونیر، سی ڈی ایل ڈی پروگرام کیلئے تقرریوں پر اراکن کونسل سراپا احتجاج

بونیر (ڈسٹرکٹ رپورٹر)ضلع کونسل بونیر کا ہنگامہ خیز اجلاس ۔سی ڈی ایل ڈی پروگرام کے لئے تقرریوں پر کونسل کے تمام اراکین سراپا احتجاج ،ڈپٹی کمشنر پر بونیر کے امیدواروں کو نظر انداز کرنے اور اپنے ضلع سمیت باہر کے اضلاع کے امیدواروں کی تقرری کا الزام ۔تقرریوں کو منسوخ کرنے اور مقامی افراد کی تقرری نہ کرنے کے خلاف احتجاج کا متفقہ اعلان ۔ضلعی انتظامیہ پر اختیارات اپنے ہاتھ میں لینے اور ضلعی حکومت کو بے اختیار کرنے کا الزام ۔اجلاس کنو نیر یو سف علی خان کی صدارت میں منعقد ہوا ۔جس میں اپوزیشن لیڈر ھاجی صدیق اللہ ،پارلیمانی لیڈران حجاب اللہ اور شاہ جہان عرف شاہ جی اور دیگر ممبران گل محمد خان عرف طوطا ،محمدی شاہ ۔اختیار باچا ۔انعام الرحمان ایڈوکیٹ ۔ولی الرحمان ۔امیر سلطان بحث میں حصہ لیا ۔انہوں نے ضلعی انتظامیہ پر تمام تر اختیارات اپنے ہاتھ میں لینے پر شدید غم وہ غصہ کا اظہار کیااور کہاہے کہ سی ڈی ایل ڈی پروگرام ملاکنڈ ڈویژن کے دیگر اضلاع میں بہت پہلے سے سرگرم عمل ہے ۔اور ضلعی حکومت نے کافی تگ وہ دو کے بعد اس پروگرام کو بونیر لایا ہے ۔لیکن ابتدائی مرحلہ میں ڈپٹی کمشنر نے تقرریوں میں مقامی تعلیم یافتہ نوجوانوں کو نظر انداز کیا جو کسی بھی صورت قبول نہیں ہے ۔انہوں نے ڈی سی پر ضلعی حکومت کے فنڈز سے ڈمپنگ سائیڈ کے نام پر قیام کے لئے نو کروڑ روپے کی کٹوتی کی ہیں جو کسی صورت قبول نہیں ہے ۔انہوں نے سی ڈی ایل ڈی فنڈز ضلع کونسل میں یونین کونسل کے نمائندہ کی بجائے وولئیج کونسل ناظمین کے ہاتھوں خرچ کرنے کی پالیسی سے اتفاق نہیں کیاہے اور ترقیاتی عمل میں ضلع کونسلر کو یکسر بائی پاس کرنے پر سخت برہمی کا اظہار کیاہے ۔انہوں نے خبردار کیا ہے کہ ضلعی انتظامیہ اپنی حد میں رہے بصورت دیگر ضلع کونسل کے جملہ ممبران وزیر اعلی ہاوس کے سامنے احتجاجی مظاہرہ کرکے استعفی پیش کریں گے ۔اجلاس میں صحت اور فنانس کمیٹیوں کے چئیر مینوں نے جائیزہ رپورٹ پیش کی جس کو کونسل نے مسترد کرتے ہوئے ائندہ اجلاس میں تفصیلی رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت جاری کردی ہے۔کنونیر یوسف علی خان نے اپنے چیمبر میں میڈیا سے گفتگوں کرتے ہوئے کہا کہ ہر صورت میں کونسل کی قراردادوں پر عمل دراامد کو یقینی بنایا جائے گا ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر