اگر کسی شہرمیں ایٹم بم پھٹ جائے تو پھر کیا ہوگا؟ وہ بات جسے جان کر آپ کے بھی رونگٹے کھڑے ہوجائیں گے

اگر کسی شہرمیں ایٹم بم پھٹ جائے تو پھر کیا ہوگا؟ وہ بات جسے جان کر آپ کے بھی ...
اگر کسی شہرمیں ایٹم بم پھٹ جائے تو پھر کیا ہوگا؟ وہ بات جسے جان کر آپ کے بھی رونگٹے کھڑے ہوجائیں گے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) آج بھارت، پاکستان اور امریکہ و شمالی کوریا سمیت مختلف ممالک کے باہمی تعلقات اس قدر کشیدہ ہیں کہ ماہرین تیسری ایٹمی کی پیش گوئیاں کرتے نظر آتے ہیں۔ ایسے میں لوگوں کے ذہنوں میں لازمی سوال اٹھتا ہے کہ اگر ان کے شہر پر ایٹم بم گر گیا تو کیا ہو گا؟ اب ماہرین نے ایک ایسا نقشہ جاری کر دیا ہے جس کے ذریعے شہری اس سوال کا جواب معلوم کر سکتے ہیں۔اس نقشے میں آپ کو اپنے شہر کا نام سرچ کرنا ہو گا اور پھر یہ آپ کو دکھائے گا کہ اگر اس شہر پر ایٹمی حملہ ہوتا ہے تو کون کون سے علاقے کس قدر اس کی زد میں آئیں گے۔

رپورٹ کے مطابق یہ نقشہ ایٹم بم کی تباہ کاری کو چار پرتوں میں دکھاتا ہے۔ سب سے پہلی پرت ایٹم بم سے نکلنے والے ’آگ کے گولے‘ (Fireball)کی ہے، دوسری تابکاری، تیسری شاک ویو اور چوتھی حرارت کی پرت ہے۔ ان پرتوں کے تناسب سے ہی علاقے ایٹم بم سے متاثر ہوں گے۔ اس نقشے میں اگر ہم لاہور کو سرچ کریں تو یہ بتاتا ہے کہ ”اس کا فائر بال 1.17مربع کلومیٹر، تابکاری 8.94مربع کلومیٹر، شاک ویو 18.3مربع کلومیٹر اور ہیٹ 78.1مربع کلومیٹر تک جائے گی اور اس سے 3لاکھ 77ہزار 82افراد لقمہ اجل بن جائیں گے جبکہ 9لاکھ 71ہزار 698افراد زخمی ہوں گے۔یہ اعدادوشمار اس وقت ہوں گے اگر ایٹم بم زمین پر آ کر پھٹا۔ اگر ایٹم بم فضاءمیں پھٹا تو ہلاکتوں کی تعداد 7لاکھ 23ہزار 700جبکہ زخمیوں کی تعداد24لاکھ 82ہزار 597افراد تک جا پہنچے گی۔واضح رہے کہ یہ اعدادوشمار 300کلوٹن وزنی ایٹم بم کے حملے کی صورت میں ہوں گے۔ ایٹم بم کی طاقت کم یا زیادہ ہونے کی صورت میں یہ اعدادوشمار بھی مختلف ہوں گے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس /بین الاقوامی