’رات کو یہ چیز پہن کر سونے والوں کو نیند اچھی نہیں آتی‘ سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن انکشاف کردیا

’رات کو یہ چیز پہن کر سونے والوں کو نیند اچھی نہیں آتی‘ سائنسدانوں نے ...
’رات کو یہ چیز پہن کر سونے والوں کو نیند اچھی نہیں آتی‘ سائنسدانوں نے انتہائی حیران کن انکشاف کردیا

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) سونے سے قبل چائے یا کافی پینا اور ٹی وی، کمپیوٹر یا موبائل فون کی سکرین پر نگاہیں جمائے رکھنا نیند کی خرابی کا باعث بنتا ہے۔ تاہم اب سائنسدانوں نے غیرمعیاری نیند کی ایک اور ایسی وجہ بتا دی ہے کہ کسی نے سوچی بھی نہ ہو گی۔ میل آن لائن کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ دیگر عوامل کے ساتھ ساتھ رات کو سونے کا لباس بھی نیند کے معیار پر بہت زیادہ اثرانداز ہوتا ہے۔ جو لوگ بہت چست یا موٹے کپڑے کے پاجامے پہن کر سوتے ہیں ان کو بہتر نیند نہیں آتی۔ خوشگوار نیند کے لیے ہمیشہ ڈھیلا ڈھالا اور ہلکا پاجامہ پہننا چاہیے۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

’دی سلیپ ہیلتھ فاﺅنڈیشن‘ کی ڈاکٹر موئرا جونج کا کہنا تھا کہ ”رات کو سوتے میں کمرے کا درجہ حرارت 15سے 25ڈگری سینٹی گریڈ کے درمیان ہونا چاہیے۔ اس سے کم یا زیادہ درجہ حرارت نیند پر برے اثرات مرتب کرتا ہے۔ جب ہم سوتے ہیں تو ہاتھوں، پیروں اور چہرے کی خون کی وریدیں حدت کھونا شروع کر دیتی ہیں، چنانچہ انہیں مناسب حد تک گرم رکھنے کے لیے کمرے کا درجہ حرارت مناسب حد تک رہنا چاہیے۔ درجہ حرارت کے حوالے سے پاجامے کا انتخاب سب سے زیادہ اہم ہے۔ جو پاجامہ بہت زیادہ موٹا اور بھاری ہو اس میں جسمانی درجہ حرارت زیادہ ہوجاتا ہے جس سے نہ صرف نیند آنے میں مشکل آتی ہے بلکہ نیند کو برقرار رکھنے میں بھی دشواری ہوتی ہے اور بار بار انسان کی آنکھ کھل جاتی ہے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس /تعلیم و صحت