میں روز وزیر اعظم کو کہہ رہا ہوں مگر میری بات کو نہیں سنا جا رہا،جب بات کی جائے تو گندی گندی اور مادر پدر آزاد گالیاں۔۔۔ عامر لیاقت حسین پھٹ پڑے

میں روز وزیر اعظم کو کہہ رہا ہوں مگر میری بات کو نہیں سنا جا رہا،جب بات کی ...
میں روز وزیر اعظم کو کہہ رہا ہوں مگر میری بات کو نہیں سنا جا رہا،جب بات کی جائے تو گندی گندی اور مادر پدر آزاد گالیاں۔۔۔ عامر لیاقت حسین پھٹ پڑے

  

 کراچی(ڈیلی پاکستان آن لائن)پاکستان تحریک انصاف کے رکن قومی اسمبلی اور معروف ٹی وی اینکر ڈاکٹر عامر لیاقت حسین اپنی ہی پارٹی پر برس پڑے،وزیر اعظم عمران خان پر ایسا الزام لگا دیا کہ کوئی تصور بھی نہ کر سکے گا۔

تفصیلات کے مطابق سوشل میڈیا پیج پر ایک ویڈیو میں ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے کہا ہے کہ اس وقت کراچی میں بہت خوفناک صورتحال ہے،اگر اب بھی وفاق کی جانب سے گرانٹ کا اعلان نہیں ہوا اور فوری طور پر لوگوں کو پیسے نہ دیئے گئے تو شہر میں افراتفری پھیل جائے گی، مجھے لگ رہا ہے کہ لوگ اب گھروں میں نہیں بیٹھیں گے بلکہ باہر نکل آئیں گے۔انہوں نےکہاکہ میں وزیر اعظم کو روز کہہ رہا ہوں مگر میری بات کو نہیں سنا جا رہا،میں اگر کوئی بات کرتا ہوں تو مجھے سوشل میڈیا پر گالیاں پڑنی شروع ہو جاتی ہیں،میں اگر کوئی بات سمجھا رہا ہوں تو میری بات نہیں سنی جا رہی بلکہ سوشل میڈیا پر لوگ مجھے گندی گندی گالیاں دینا شروع ہو جاتے ہیں،اصولی طور پر یہ ہونا چاہئے تھا کہ وزیر اعظم کے پاس منتخب اراکین کو  بیٹھے ہونا چاہئے تھا لیکن وہاں پر حفیظ شیخ اور علی ظفر بیٹھے ہوتے ہیں،اب دو دن سے وہاں پر اسد عمر اور خسرو بختیار بیٹھ رہے ہیں،جب آپ منتخب اراکین جو گراؤنڈ پر ہیں سے پوچھیں گے تو وہ آپ کو بتائیں گے،منتخب اراکین کو پتا ہے کہ گراؤنڈ پر کیا صورتحال ہے؟جب مجھےپوچھاجائےگا تو میں بتاؤں گا کہ اس وقت کیا پریشانی ہے؟مجھ سے پوچھا جائے تو میں خان صاحب کو بتاؤں کہ انہیں اس وقت کہاں جانا چاہئے؟وہ بات ہی نہیں کرنے دے رہے،جب بات کی جائے تو گندی گندی اور مادر پدرآزاد گالیاں دینا شروع ہو جاتے ہیں۔

ڈاکٹر عامر لیاقت حسین نے کہا کہ وفاق کی طرف سے کراچی کے ہر ایم این اے کو 250تھیلے ملنے تھے لیکن ابھی تک وہ بھی نہیں ملے، آپ بتائیں کہ ڈھائی سو بیگز سے کیا بنے گا؟ہم یہاں پر روزانہ 6ہزار بیگز تیار کر رہے ہیں لیکن ہم شہر کراچی کے لئے کہاں سے گرانٹ لائیں؟ اگر ہم مل کر کام نہیں کریں گے تو مسائل  کیسے حل ہوں گے ؟شہر کراچی نے وزیر اعظم کو 14سیٹیں دی ہیں،ان کو اندازہ نہیں ہے کہ ہم کتنے برے حالات میں ہیں؟اگر ہم مل کر کام نہیں کریں گے تو یہ کیسے ہو گا؟ہم کیا کریں مجھے بتائیں؟میں خود کتنا پریشان ہوں،میرا لائنز ایریا آپ نے دیکھا ہے،جیٹ لائنز،جیکب لائنز،جمشید کوارٹر، جمشید ایسٹ ہے،جمشید ویسٹ سمیت دیگر علاقے ہیں جہاں تلوار لٹک رہی ہے، لوگوں کو کھانے کو نہیں مل رہا اور وہ رو رہے ہیں،میں کہاں سے لے کر آؤں؟میں کب تک لوگوں کو خیرات اور صدقہ کھلاؤں؟میں سیدوں کو تو صدقہ نہیں کھلا سکتا،میں اپنا درد بیان ہی کر سکتا ہوں۔

مزید :

قومی -کورونا وائرس -