خوشخبری ۔۔پاکستان نے کلراٹھی زمینوں کو بہتر کرنے کے حوالے سے بڑی کامیابی حاصل کر لی

خوشخبری ۔۔پاکستان نے کلراٹھی زمینوں کو بہتر کرنے کے حوالے سے بڑی کامیابی ...
خوشخبری ۔۔پاکستان نے کلراٹھی زمینوں کو بہتر کرنے کے حوالے سے بڑی کامیابی حاصل کر لی
سورس: بشکریہ : سوشل میڈیا

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

خوشخبری ۔۔پاکستان نے کلراٹھی زمینوں کو بہتر کرنے کے حوالے سے بڑی کامیابی حاصل کر لی
 اسلام آباد ( خصوصی رپورٹ )خوشخبری ۔۔پاکستان نے کلراٹھی زمینوں کو بہتر کرنے کے حوالے سے بڑی کامیابی حاصل کر لی۔پاکستان نہ صرف خود کلراٹھی (Saline) زمینوں کو بہتر کرنے کے قابل ہو گیا ہے بلکہ انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی کے تعاون سے حاصل کردہ علم کو دنیا کے ساتھ شیئر بھی کر رہا ہے۔

"جنگ " کے مطابق یہ بات آئی اے ای اے کی جانب سے شائع ہونے والے ہفتہ وار نیوز لیٹر میں بتائی گئی۔اپنی اس رپورٹ میں انٹرنیشنل اٹامک انرجی ایجنسی نے پاکستان کے نیوکلیئر انسٹیٹیوٹ فار ایگریکلچر اینڈ بائیولوجی (نیاب) کو موضوع بناتے ہوئے اس کی کارکردگی کے مختلف پہلوؤں کو اجاگر کیا ۔یہ رپورٹ نیاب کا حوالہ دیتے ہوئے بتاتی ہے کہ پاکستان کی 57 لاکھ ہیکٹر قابل کاشت اراضی نمکیات کی وجہ سے بیکار ہو چکی ہے اور ہر سال اس میں 40 ہزار ہیکٹر کا اضافہ ہو رہا ہے۔ جس کے باعث کھیت صحرا کا منظر پیش کرنے لگتے ہیں اور اس زمین میں زیادہ تر فصلیں اگنے کے قابل نہیں رہتیں۔

آئی اے ای اے کے مطابق ایجنسی کی ابتدائی مدد کے بعد نیاب نے نمک برداشت کرنے والی فصلوں کی نشوونما، پودے لگانے اور مٹی کو نمکین بنانے سے نمٹنے کے لیے مٹی کے انتظام کی تکنیکوں کو نافذ کرنے میں اہم پیش رفت حاصل کی ہے اور اب نیاب اسی مسئلے کا شکار ممالک کے ساتھ اپنی مہارتوں کا اشتراک کرتے ہوئے ان ممالک کے سائنسدانوں کو تربیت کی پیشکش کر رہا ہے۔

اس سلسلے میں ادارے نے آذربائیجان، برونڈی، عراق، جنوبی افریقی حصے کے ملک لیسوتھو اور سینیگال کے 21 سائنسدانوں اور مٹی کے ماہرین کو فیلوشپس اور سائنسی دوروں کے ذریعے متعلقہ آئیسو ٹوپک تکنیکوں پر تربیت دی گئی ہے جبکہ ایشیا بحرالکاہل کی خطے کی مدد کے لیے نیاب کے ماہرین نے علاقائی سائنسی برادری کے 39 اراکین کو موسمیاتی تبدیلی کی لچک کو بڑھانے کے لیے موسمیاتی اسمارٹ زراعت کے طریقوں پر بھی تربیت دی۔

اس رپورٹ میں پاکستان اٹامک انرجی کمیشن میں بین الاقوامی امور کے ڈائریکٹر جنرل عامر منظور کا ایک بیان بھی شامل کیا گیا ہے جس کے مطابق نیاب نے آئی اے ای اے سے بہت زیادہ علم حاصل کیا ہے اور اب یہ علم مہارتوں کی صورت میں واپس لوٹانے کا وقت ہے۔ ایجنسی کے تعاون کرنے والے مرکز کے طور پر نیاب پڑوسی ممالک، خطے اور دیگر ممالک کے ساتھ تعاون کرنا چاہے گا۔

 واضح رہے کہ اقوام متحدہ کے فوڈ اینڈ ایگریکلچر آرگنائزیشن کے مطابق دنیا بھر میں قابل کاشت زمین کا 8 فیصد حصہ کلر سے متاثر ہے۔