ملک میں طبقاتی تقسیم کے باعث عوام پریشان حال ہیں،میاں مقصود احمد

ملک میں طبقاتی تقسیم کے باعث عوام پریشان حال ہیں،میاں مقصود احمد

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app

لاہور(نمائندہ خصوصی)امیرجماعت اسلامی پنجاب میاں مقصود احمدنے چیف جسٹس کے بیان ’’30سال ڈنڈے کے زور پر حکومت کی گئی،ادارے ذمہ داری پوری کرنے میں ناکام رہے‘‘پر تبصرہ کرتے ہوئے کہاہے کہ ملک میں طبقاتی تقسیم کے باعث عوام پریشان حال ہیں۔یہی وجہ ہے کہ پاکستان ترقی کی دوڑ میں دیگرممالک سے بہت پیچھے ہے۔جمہوریت کے تسلسل کوجاری رکھ کر ہی ہم آمریت کے اثرات کوزائل کرسکتے ہیں۔30سالوں تک آمریت کی بدولت ملک وقوم کوبڑانقصان ہواہے۔انہوں نے کہاکہ 68برس سے ملک کو کرپٹ عناصر نے دونوں ہاتھوں سے لوٹا ہے جس کی وجہ سے خزانے خالی اورمعیشت زبوں حالی کاشکار ہے۔حکمرانوں نے ذاتی مفادات کی خاطر ملک وقوم کیلئے مسائل کے انبار لگادیئے ہیں۔مہنگائی ،بے روزگاری،کرپشن،لوڈشیڈنگ اور ایسے کئی بڑے مسائل اژدھے کی مانند منہ کھولے کھڑے ہیں۔اب تک جتنے بھی لوگ برسراقتدار آئے سب نے ملک کولوٹااور اندرون وبیرون ملک اپنی جائیدادیں بنائیں اوراپنے بینک بیلنس میں اضافہ کیاہے۔عوام کے مسائل کے حل سے کسی کوکوئی غرض نہیں۔کرپشن اور اقرباء پروری کے کلچر کوختم کیے بغیر ہم ترقی نہیں کرسکتے۔انہوں نے کہاکہ محب وطن قیادت کافقدان سب سے بڑامسئلہ ہے۔ضرورت اس امر کی ہے کہ پڑھے لکھے باکردار اور محب وطن لوگوں کو آگے لایاجائے۔کرپٹ اور ظالمانہ نظام سے نجات ناگزیر ہے۔میاں مقصود احمد نے مزیدکہاکہ پانامالیکس نے کرپٹ عناصر کے چہرے بے نقاب کردیئے ہیں مگر حکومت کی جانب سے احتساب کے حوالے سے لیت و لعل سے کام لیا جارہا ہے اورصاف دکھائی دے رہا ہے کہ حکومت پانامالیکس کودبانے کے لئے اوچھے ہتھکنڈے استعمال کررہی ہے۔انہوں نے کہاکہ پاکستان اسلامی فلاحی ریاست ہے مگر اس میں عاقبت نااندیش پالیسیوں کی بدولت انگریزوں کاقانون رائج ہے۔پاکستان میں کرپشن کوختم کرنے کیلئے احتساب کاعمل شریف فیملی سے شروع کرنا ہوگا۔پانامالیکس میں وزیر اعظم کے صاحبزادوں کے نام آنا تشویشناک امر ہے۔جن لوگوں نے بھی آف شور کمپنیوں کے ذریعے کالے دھن کوسفید کیاہے اورقرضے معاف کرائے ہیں ان سب کا کڑااحتساب ہونا چاہئے۔