وفاقی بجٹ کا مسودہ وزیراعظم کو لندن میں موصول ، آج دستخط کر کے واپس بھیج دینگے

وفاقی بجٹ کا مسودہ وزیراعظم کو لندن میں موصول ، آج دستخط کر کے واپس بھیج ...

 لاہور(سعید چودھری) وزارت خزانہ نے آئندہ مالی سال کے بجٹ کا مسودہ اور بجٹ تجاویز وزیر اعظم کو برطانیہ بھجوا دی ہیں جن کی وزیر اعظم میاں محمد نواز شریف آج قومی اقتصادی کونسل اور کابینہ کے خصوصی اجلاسوں کے بعد منظوری دیں گے ۔وزیر اعظم برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمیشن سے ان اجلاسوں کی ویڈیو لنک کے ذریعے صدارت کریں گے ۔ذرائع نے بتایا ہے کہ ان اجلاسوں کے بعد وزیر اعظم وفاق کے چیف ایگزیکٹو اور کابینہ کے سربراہ کے طور پر بجٹ بل کو قومی اسمبلی میں پیش کرنے کی منظوری دیں گے اور اس بابت متعلقہ دستاویز پر اپنے دستخط کر کے اسے واپس پاکستان میں وزارت خزانہ کو بھجوائیں گے جسے وزیر خزانہ اسحق ڈار 3جون کو قومی اسمبلی میں پیش کریں گے ۔آئین کے تحت بجٹ اور مالیاتی بل صرف حکومت ہی قومی اسمبلی میں پیش کر سکتی ہے ۔آئین کے آرٹیکل 90کے تحت وفاقی حکومت وزیر اعظم اور وفاقی وزراء پر مشتمل ہے جو صدر کے نام سے اپنے اختیارات استعمال کرتی ہے ۔قانونی مشیروں نے حکومت کو مشورہ دیا ہے چونکہ حکومت سے مراد وزیر اعظم اور اس کی کابینہ ہے اور وزیر اعظم کے بغیر حکومت کا تصور پورا نہیں ہوتا اس لئے ضروری ہے کہ وزیر اعظم خود کابینہ کے اجلاس کی صدارت کریں جس کے لئے ویڈیو لنک کا استعمال کیا جائے گا ۔وزیر اعظم آج شام برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمیشن میں موجود ہوں گے ۔کسی دوسرے ملک میں ہائی کمیشن یا سفارت خانہ پاکستان کا حصہ تصور کیا جاتا ہے ۔ملکی اور بین الاقوامی قوانین کے تحت سفارت خانے اور ہائی کمیشن میں کسی شخص کی موجودگی ایسے ہی تصور کی جاتی ہے جیسے وہ پاکستان کی سرزمین پر موجود ہو ۔یوں وزیر اعظم کے خطاب کے حوالے سے بھی یہ تصور کیا جائے گا کہ وہ پاکستان کی سرزمین پر موجود ہیں ۔وزیر اعظم آج شام 5بجکر 15منٹ پر قومی اقتصادی کونسل کے اجلاس سے جبکہ 6بجکر 30منٹ پر کابینہ کے خصوصی اجلاس میں ویڈیو لنک کے ذریعے شریک ہوں گے ۔وہ ان اجلاسوں کی صدارت کے علاوہ ارکان سے خطاب بھی کریں گے ۔وزیر اعظم کو خصوصی کوریئر کے ذریعے بھجوایا گیا بجٹ کا مسودہ اور متعلقہ دستاویزات برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمیشن کو موصول ہو چکی ہیں ۔جن پر آج کے دونوں اجلاسوں کے بعد وزیر اعظم دستخط کر کے انہیں پاکستان واپس بھجوائیں گے ۔جو آئندہ 24گھنٹوں میں پاکستانی حکومت کو موصول ہو جائیں گی۔

مزید : صفحہ اول