کھیلنے کا انداز ہمیشہ مار دھاڑ والا رہا،مصباح الحق

کھیلنے کا انداز ہمیشہ مار دھاڑ والا رہا،مصباح الحق

  

لاہور(این این آئی)حال ہی میں بین الاقوامی کرکٹ کو خیرباد کہنے والے مصباح الحق نے کہا ہے کہ ریٹائرمنٹ کے باوجود مستقبل میں کسی نہ کسی صورت میں کرکٹ سے اپنا تعلق برقرار رکھوں گااور یہ ممکن ہی نہیں کہ کھیل سے اپنا تعلق ختم کرلوں،ویسٹ انڈیز میں ٹیسٹ سیریز جیتنے پر جس طرح میرے کیریئر کا اختتام ہوا ہے اس کے بعد میں بڑی حد تک مطمئن ہوں اور خود کو بہت پرسکون محسوس کر رہا ہوں۔ بی بی سی کو انٹر ویو میں انہوں نے کہا کہ اگرچہ فوری طور پر میں بہت بڑی تبدیلی محسوس نہیں کر رہا ہوں لیکن کرکٹ کھیلنے کے دوران ٹریننگ اور پریکٹس کا جو دباؤ ہر وقت موجود رہتا تھا وہ اب نہیں ہے،میں میں اب فیملی کو زیادہ وقت دے سکتا ہوں۔مصباح الحق کا کہنا ہے کہ جو کام ساری زندگی کیا ہو اس سے دور ہونا ممکن نہیں ہے۔کرکٹ سے مجھے جنون کی حد تک پیار ہے۔ کرکٹ خون کی طرح میری رگوں میں ہے، لہٰذایہ تو کسی نہ کسی صورت میں چلتی ہی رہے گی۔ میرا ارادہ ہے کہ پاکستان سپر لیگ تک کھیلوں، اس کے بعد کھیلنا چھوڑ دوں گا، پھر سوچوں گا کہ میرا تجربہ کس طرح ملک کے کام آ سکتا ہے، چاہے یہ پاکستان کرکٹ بورڈ میں آئے یالیکن کوشش یہی ہوگی کہ ضلع،ریجن یا ڈپارٹمنٹ، کہیں بھی کرکٹ کی بہتری کے لیے کام کر کے مجھے خوشی ہوگی۔

مصباح الحق کا کہنا ہے کہ اگر وہ آسٹریلوی دورے میں کامیاب ہوجاتے تب بھی ویسٹ انڈیز میں ان کی سیریز آخری ہوتی کیونکہ میں نے ریٹائرمنٹ کا فیصلہ بہت پہلے ہی کر لیا تھا۔ میں انگلینڈ کے خلاف متحدہ عرب امارات میں کھیلی گئی سیریز کے بعد ریٹائر ہونا چاہتا تھا لیکن کہا گیا کہ انگلینڈ کے اگلے دورے میں تجربہ کار کھلاڑیوں کی ضرورت ہوگی لہٰذافیصلہ واپس لیا۔ پھر میں نے دیکھا کہ آسٹریلیا نیوزی لینڈ کے بعد فوری طور پر ویسٹ انڈیز کا دورہ ہے جس پر میں نے اس دورے تک کھیلنے کا ارادہ کر لیا تھا۔ پہلی بار ویسٹ انڈیز میں ٹیسٹ سیریز جیتنے کی خواہش بھی میرے دل میں تھی۔ ایسا نہیں ہے کہ اگر آسٹریلیا میں کامیاب ہو جاتا تو کھیلتا رہتا۔

مزید :

کھیل اور کھلاڑی -