مخدوم رشید پولیس سے مبینہ مقابلے میں ڈاکو ہلاک‘ ورثاء نے جعلی قرار دیدیا

مخدوم رشید پولیس سے مبینہ مقابلے میں ڈاکو ہلاک‘ ورثاء نے جعلی قرار دیدیا

  

ملتان(کرائم رپورٹر) مخدوم رشید پولیس نے مبینہ مقابلے میں ڈاکو ہلاک کردیا،پولیس کے مطابق ماراجانیوالا ڈکیتی کی وارداتوں میں ملوث رہا ہے جبکہ ورثاء نے مقابلہ جعلی قرار دیتے ہوئے جوڈیشل انکوائری کا مطالبہ کیاہے،پولیس کے مطابق ایس ایچ او تھانہ مخدوم رشید بدھلہ سنت روڈ پر را ت گشت پر تھے کہ دو افراد وہاں سے تیزی کیساتھ بھاگ نکلے،انکا تعاقب کیا گیا اور تھانہ گلگشت کے علاقہ (بقیہ نمبر14صفحہ12پر )

سیداں والا بائی پاس کے قریب انہوں نے پولیس پر فائرنگ کر دی جوابی فائرنگ میں ایک ماراگیا جس کا نام بعد ازاں عبدالحمید کھوکھر سکنہ نہالے والا معلوم ہوا جبکہ اسکا نامعلوم ساتھی فرار ہوگیا، دریں اثناء مرنیوالے کی والدہ غلام سکینہ بیوی یاسمین،بیٹے عمیر ،بھائی سعید، آصف سمیت دیگر رشتہ داروں نے ضلع کچہری پہنچی اور اس دوران ان کاکہنا تھا کہ عبدالحمید کوسی اآئی اے ممتازآباد پولیس نے 27 مئی کو پکڑا تھا ان کی فون پر 28 مئی کو بات بھی کرائی گئی جس میں عبدالحمید نے بتایا کہ وہ خیریت سے ہے ا سکا ریکارڈ بھی موجود ہے،انہوں نے 29 مئی کو عدالت میں برآمدگی کیلئے رٹ دائر کی بیلف تھانہ بھی گیا،جس کے بعد انہیں عبدالحمید کے پولیس کے ہاتھوں قتل کی اطلاع ملی اور لاش نشتر سے حوالے کر دی گئی، ، انہوں نے الزام لگایا کہ عبدالحمید سبزی منڈی میں تربوز فروخت کرتا تھا وہ بڑی کھیپ لے کر آزاد کشمیر گیا ہوا تھا جہاں سے پولیس نے پکڑا اس کے پاس پانچ لاکھ کی رقم بھی تھی جو پولیس والوں نے اپنے پاس رکھ لی ہے،انہوں نیحکام سیانصاف اور واقع کی جوڈیشل انکوائر کا مطالبہ کیاہے۔دوسری جانب ترجمان ضلعی پولیس کا کہنا ہے کہ بد نامِ زمانہ ملزم عبدالحمید عرف میدا رہزنی اور ڈکیتی کی متعدد وارداتوں میں ملتان پولیس کو مطلوب تھاجس کے سر کی قیمت پانچ لاکھ روپے مقرر تھی ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -