حکومت نے چین سے 100 ارب روپے قرض لینے کا فیصلہ کرلیا، اس رقم سے کیا کام کیا جائے گا؟ جان کر پاکستانیوں کے واقعی ہوش اُڑ جائیں گے

حکومت نے چین سے 100 ارب روپے قرض لینے کا فیصلہ کرلیا، اس رقم سے کیا کام کیا جائے ...
حکومت نے چین سے 100 ارب روپے قرض لینے کا فیصلہ کرلیا، اس رقم سے کیا کام کیا جائے گا؟ جان کر پاکستانیوں کے واقعی ہوش اُڑ جائیں گے

  

اسلام آباد (مانیٹرنگ ڈیسک)حکومت پاکستان نے قرضوں کی ادائیگی کے گھمبیر ہوتے ہوئے بحران سے نکلنے کیلئے چین سے بھاری قرض لینے کا فیصلہ کر لیا ہے ۔ اخبار ایکسپریس ٹربیون کی رپورٹ کے مطابق وفاقی کابینہ نے فیصلہ کیا ہے کہ بیرونی قرض کی واپسی کیلئے چین سے قرض لیا جائے گا جس کا حجم ایک ارب ڈالر (تقریباً 100 ارب پاکستانی روپے ) ہو گا۔ چین سے لیے گئے قرض سے جو غیر ملکی قرض اتارا جائے گا اس میںسابق حکمران پرویز مشرف کے دور میں لیا گیا یورو بانڈ قرضہ بھی شامل ہے ۔

طیب اردوان کے خاندان کو ڈھائی ارب روپے کا تحفہ ، اتنی مہنگی یہ کیا چیز تھی اور کس کی جانب سے دی گئی ؟ ایسا انکشاف منظر عام پر کہ پوری دنیا حیران پریشان رہ گئی

چینی بینک سے قرض لینے کا فیصلہ ایک ایسے وقت پر کیا گیا ہے کہ جب پہلے ہی چین کو قرض سے متعلقہ ادائیگیوں میں گزشتہ ایک سال کے دوران تقریباً 3 گنا اضافہ ہو چکا ہے ۔ رپورٹ کے مطابق نیا قرضہ چائنہ ڈویلپمنٹ بینک سے لیا جائے گااور رواں مالی سال کے دوارن یہ دوسرا موقع ہو گا کہ قرضوں کی ادائیگی کیلئے چائنہ ڈویلپمنٹ بینک سے قرض لیا جائے گا۔ اس سے پہلے اسی بینک سے 70 کروڑ ڈالر (تقریباً 70 ارب پاکستانی روپے ) کا قرض تین سال کیلئے 4.44 فیصد شرح سود پر لیا گیا تھا ۔ واضح رہے کہ مشرف حکومت نے 2007 ءمیں 6.875 فیصد شرح سود پر 10 سالہ بانڈ جاری کیے تھے ، جن کی مدت اس ہفتے ختم ہو رہی ہے۔

مزید :

قومی -