اگر آپ موبائل فون بہت زیادہ استعمال کرتے ہیں تو کہیں آپ بھی اس خطرناک بیماری میں مبتلا نہیں ہو گئے؟ ابھی اپنے ہاتھ کا انگوٹھا چیک کریں کہ اس پر۔۔۔

اگر آپ موبائل فون بہت زیادہ استعمال کرتے ہیں تو کہیں آپ بھی اس خطرناک بیماری ...
اگر آپ موبائل فون بہت زیادہ استعمال کرتے ہیں تو کہیں آپ بھی اس خطرناک بیماری میں مبتلا نہیں ہو گئے؟ ابھی اپنے ہاتھ کا انگوٹھا چیک کریں کہ اس پر۔۔۔

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) موبائل فون آج کل ہر ایک شخص کی ضرورت بن چکا ہے لیکن نوجوان نسل کو ضرورت سے بڑھ کر ایک لت کی طرح موبائل فونز کے استعمال کی عادت پڑ چکی ہے۔ جس کسی نوجوان کو جب کبھی دیکھو اس کا انگوٹھا موبائل فون کی سکرین پر ٹائپنگ یا سکرولنگ کر رہا ہوتا ہے۔ اب سائنسدانوں نے ایسے موبائل فونز کے عادی نوجوانوں کے ایک تکلیف دہ بیماری میں مبتلا ہونے کے متعلق بتا دیا ہے۔ میل آن لائن کی رپورٹ کے مطابق سائنسدانوں کا کہنا ہے کہ ”سمارٹ فونز پر مسلسل ٹائپنگ کرنے سے ہاتھوں کے انگوٹھوں کی ہڈی کو جو غیرفطری حرکت کرنی پڑتی ہے وہ انگوٹھوں کے درد کا باعث بن رہی ہے۔ انگوٹھوں کے درد کی اس بیماری کو”سمارٹ فون تھمب“ کا نام دیا گیا ہے۔

اگر آپ کو بھی بہت زیادہ پیشاب آتا ہے تو یہ خبر آپ کیلئے ہے، بالآخر سائنسدانوں نے وجہ ڈھونڈ نکالی

نیویارک کے علاقے روچیسٹر میں واقع میو کلینک کی تحقیقاتی ٹیم گزشتہ سات سال سے سمارٹ فون تھمب کا مطالعہ کر رہی ہے۔ ٹیم کی سربراہ ڈاکٹر کرسٹین ژاﺅ کا کہنا تھا کہ ”سمارٹ فون تھمب نامی بیماری میں انگوٹھوں میں شروع ہونے والا دردبعد ازاں جوڑوں کی سوزش کی شکل اختیار کرسکتا ہے اور زندگی اجیرن بنا سکتا ہے۔ اس بیماری کا عمومی نام ’ٹینڈنائٹس‘ (Tendinitis)ہے۔آدمی موبائل فون کو ہاتھ میں تھام کر اس کی سکرین پر انگوٹھوں کو جس طرح حرکت دیتا ہے وہ بہت غیرفطری ہوتی ہے۔ انگوٹھے کی ہڈی کے اس طر ح عجیب و غریب طریقے سے حرکت کرنے سے پٹھوں کو ہڈی سے جوڑے والی موٹی بافت تکلیف کا شکار ہوتی ہے۔ “

مزید :

تعلیم و صحت -